Urdu Manzil


Forum
Directory
Overseas Pakistani
 

زہرا جیند  کراچی
اجنبی  شہر  میں  کوئی  نہ  شناسا  نکلا
شہر  کا شہر  مرے  خون  کا  پیاسا نکلا


بے بسی کیسی نظر آتی ہے ہر سمت کہ اب
گھر سے ہر شخص لئے ہاتھ میں کاسا نکلا

 
پشت سے وار کیا تُو نے جو تاریکی میں
حوصلہ تجھ میں مرے دوست ذرا سا نکلا

کیا تمہیں مجھ سے محبت ہے یہ پوچھا میں نے
لفظ   اقرار   کا   ہونٹوں   سے   دبا   سا   نکلا

روٹھا روٹھا سا لگا دُور سے دیکھا جب تک
گفتگو  کی  تو  وہ  اِک  شخص بھلا سا نکلا

یاد ہے زہراہمیں اس کی وفا کا دعویٰ
تجزیہ کرنے کو بیٹھے تو دلاسہ نکلا

زہرا جیند
خوابوں میں ملا تھا وہ خیالوں میں ملا تھا
یہ کس نے کہا دن کے اجالوں میں ملا تھا

وہ جس کی وفاؤں پہ بہت مان تھا دل کو
بچھڑا تو بچھڑ کر کئی سالوں میں ملا تھا

مسکان لبوں پر تھی نہ آنکھوں میں چمک تھی
اس   بار  وہ  کچھ  اور  ہی  حالوں میں ملا تھا

اپنا  تو  نہیں تھا  مگر  اپنا  سا  لگا  تھا
اِک شخص ہمیں جاننے والوں میں ملا تھا

زہرا جیند

واسطہ بھی رکھتے ہیں رابطہ بھی رکھتے ہیں
ہم  مگر  محبت  میں ضابطہ بھی رکھتے ہیں

کو ن  کب  بچھڑ  جائے  کس کو یہ خبر لوگو
اس لیے تو چا ہت میں فاصلہ بھی رکھتے ہیں

سا تھ چلتے ر ہتے ہیں دُور تک مگر پھر بھی
لو گ واپسی کا اِک راستا بھی ر کھتے ہیں

ٹوٹ  کر  محبت  بھی   کرنا   جانتے  ہیں   ہم
اور فر یب کھا نے کا حو صلہ بھی رکھتے ہیں

زہرا جیند کراچی


اِک ستارا سفر میں رہتا ہے
کوئی پیارا سفر میں رہتا ہے


ہم تو ٹھہرے ہوئے ہیں مدت سے
دل    ہمارا    سفر   میں   رہتا  ہے


اب سمندر سفر نہیں کرتا
اب کنارا سفر میں رہتا ہے

 

تم کو اس کی خبر نہ ہو پائی
غم تمھارا سفر میں رہتا ہے


اِک مسافر تلاشِ منزل میں
تھکا ہارا سفر میں رہتا ہے

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE