Forum
Directory
Overseas Pakistani
 


احمد علی برقیؔ اعظمی

]نذرِ مُشتاق احمد یوسفیؔ
ڈاکٹر احمد علی برقیؔ اعظمی
مشتاق یوسفی کا نہیں ہے کوئی جواب
ہیں وہ سپہرِ اردو کے رخشندہ ماہتاب

اُردو ادب کو اُن پہ ہمیشہ رہے گا ناز
اُن کی نگارشات ہیں عالم میں انتخاب
برِ صغیر ہی میں نہیں ہیں وہ سربلند
ہیں وہ جہانِ فکر میں فنکار کامیاب
گلہائے رنگا رنگ کی خوشبو سے جا بجا
ہے گلشنِ ادب میں معطر ہر اک کتاب
سب سرگذشت لکھتے ہیں اُن کی ہے زرگذشت
عہدِ رواں میں طنز و ظرافت کا احتساب
ادبی نقوش شہرۂ آفاق اُن کے ہیں
ہوتے رہیں گے اہلِ نظر جن سے فیضیاب
طرزِ بیاں میں طنز و ظرافت کی روشنی
ہے کوئی ماہتاب تو کوئی ہے آفتاب
عہدِرواں میں جو بھی ہیں اردو کے قارئین
اُن کی نگارشات میں زندہ ہے اُن کا خواب
توصیف اُن کی برقیؔ ہے ناقابلِ بیاں
اردو ادب پہ اُن کے ہیں احسان بے حساب

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


اُس نے کہا یہ چلتے چلتے
گلے گی دال یہ گلتے گلتے
قلب و جگر میں بپا ہے محشر
وعدۂ فردا ٹلتے ٹلتے
ڈر لگتا ہے گُلبدنوں سے
آتشِ گُل سے جلتے جلتے
ٹوٹی کمندِ شوق اچانک
رہ گیا ہاتھ میں مَلتے مَلتے
بامِ عروج سے آگیا نیچے
ڈھل گیا سورج ڈھلتے ڈھلتے
آگئی زد میں فصلِ خزاں کے
شاخِ تمنا پھلتے پھلتے
موجِ حوادث میں رہ رہ کر
پَل گیا برقیؔ پَلتے پَلتے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل
احمد علی برقیؔ اعظمی
اُس نے کہا یہ چلتے چلتے
گلے گی دال یہ گلتے گلتے
قلب و جگر میں بپا ہے محشر
وعدۂ فردا ٹلتے ٹلتے
ڈر لگتا ہے گُلبدنوں سے
آتشِ گُل سے جلتے جلتے
ٹوٹی کمندِ شوق اچانک
رہ گیا ہاتھ میں مَلتے مَلتے
بامِ عروج سے آگیا نیچے
ڈھل گیا سورج ڈھلتے ڈھلتے
آگئی زد میں فصلِ خزاں کے
شاخِ تمنا پھلتے پھلتے
موجِ حوادث میں رہ رہ کر
پَل گیا برقیؔ پَلتے پَلتے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی
ہے خانۂ دل یورش و یلغار کی زد میں
جس روز سے آیا ہے یہ دلدار کی زد میں
معلوم نہیں تھا مجھے کیا اُس کا ہے کردار
میں آگیا شیرینیٔ گفتار کی زد میں
کیوں جلوہ گہہِ ناز سے باہر نہیں آتا
ہے حُسن ترا عشق کے اظہار کی زد میں
میں کون ہوں کیا ہوں مجھے کچھ یاد نہیں ہے
ہے جوشِ جنوں یہ نگہہِ یار کی زد میں
طوفانِ بلاخیز میں جاؤں تو کہاں جاؤں
ہے کشتیٔ دل اب مری منجدھار کی زد میں
ہر گام پہ رہزن ہیں نہیں کوئی بھی رہبر
 

ہے قافلۂ زندگی اغیار کی زد میں


دیوار یہ نفرت کی جو تم کرتے ہو تعمیر


آسکتے ہو تم بھی اسی دیوار کی زد میں
 

حقدار کا حق جو بھی غصب کرتے ہیں اکثر


آجاتے ہیں وہ بھی کبھی حقدار کی زد میں

ہم بھی کبھی غالب تھے مگر آج ہیں مغلوب


ہے عمرِ رواں درہم و دینار کی زد میں


تلوار سے ہے تیز صحافی کا قلم آج


ہیں اہلِ سیاست سبھی اخبار کی زد میں
 

ہے تیرِ نظر سامنے احمد علی برقی
 

دل ہے مرا اُس شوخ کے دیدار کی زد میں
 

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE