Urdu Manzil


Forum
Directory
Overseas Pakistani
 

کچھ اپنے بارے میں

ایوب خاور 

میں ضلع چکوال کے ایک نواحی گاؤں میں گرمیوں کی ایک زرد سہ پہر کو پیداہوا۔یہ 1948ء کے جون کی بارہویں سہ پہر تھی۔ ماں باپ نے میرا نام محمد ایوب خان رکھا۔ ابتدائی تعلیم گاؤں کے پرائمری اسکول میں ہوئی۔ چھٹی جماعت چکوال کے گورنمنٹ ہائی اسکول میں اور پھر ساتویں سے میٹرک تک کا عرصہ میں نے کراچی کے مقبولِ عام ہائی اسکول شرف آباد کے کلاس روموں میں گزارا۔پھر کراچی ہی کے نیشنل کالج سے بی۔اے اور کراچی یونی ورسٹی سے اُردو ادب میں ایم۔اے کیا۔ اُس کے فوراً بعد ہی پاکستان ٹیلی وژن کا رپوریشن کے ساتھ پروگرام پروڈیوسر کی حیثیت سے منسلک ہوگیا۔
زندگی سے میرا تعارف بڑے عجیب انداز میں ہوا۔وہ اس طرح کہ میرے پاؤں گارے مٹی میں لتھڑے ہوئے اورہاتھوں کی پوریں ریت سیمنٹ سے بھری ہوئی تھیں، بغل میں اُردو کی چوتھی کتاب اور دانتوں میں کھلا ہوا قلم تھا۔بچپن کی دہلیز پر زندگی سے یہ میرا پہلا تعارف تھا۔ پھر یونی ورسٹی تک پہنچتے پہنچتے محنت کے کئی رنگ اور مشقت کے کئی روپ میرے ہاتھ کا زیور اور پیروں کا چکر بنے لیکن ایک تخلیقی اُپچ تھی جو چھٹی جماعت ہی سے چوری چھپے میری روح کے کسی انتہائی گوشے میں دَر آئی تھی جو بعد میں اسکول،کالج اور یونی ورسٹی کے کوریڈورز اور کلاس روموں اور لائبریریوں اور ریڈیوپاکستان کراچی کی آب و ہَوا میں میرے آگے پیچھے چلنے پھرنے، اٹھنے بیٹھنے اور سونے جاگنے لگی لیکن میں اُ س سے باقاعدہ ہم کلام1970ء میں ہُوا۔

یہ جو میری پہلی کتاب ہےگلِ موسمِ خزاں اسی ہم کلامی کی ترتیب ہے۔ زندگی نے جس حُلیے میں مجھے پہلی مرتبہ دیکھا تھا ،اتنے برسوں میں نہ جانے کتنے بچوں کو مَیں نے اِس حُلیے میں دیکھا ہے گویا اِن تیس پینتیس برسوں میں کچھ بھی نہیںبدلا،صرف تبدیلی کی خواہش اس خطّے کی آب و ہَوا میں سُوکھے بادلوں کی طرح گرجتی رہی ہے۔گلِ موسمِ خزاں ،اسی تشنہ کامی اور اسی خواہشِ ناتمام کا پیش لفظ ہے۔

یکم جولائی/ 1991ء 

...................................................

کچھ بھی نہیں بدلا

گل موسم خزاںپہلی بار1991ء میں اسلم گورانے شائع کی جس میں1970ء سے 1990ء تک کا میرا کلام شامل ہے۔دوسری بار صفدر حسین نے اپنے ادارے الحمدپبلی کیشنز کے زیرِاہتمام 2001ء میں تمھیں جانے کی جلدی تھی کے ساتھ ہی شائع کیا۔لیکن محترم اختر حسین جعفری جو ہمارے عہد کے انتہائی قابل ذکر اور منفرد نظم نگار ہیں، اُن کی وہ تحریر جو انھوں نے بہت محبت اور سنجیدگی کے ساتھ میری شاعری کے بارے میں لکھی تھی اور اس کتاب کی پہلی اشاعت میں شامل تھی، گم ہوجانے کی وجہ سے دوسری اشاعت میں شامل نہ ہوسکی اور خود میں نے جو اپنے بارے میں فلیپ کے طور پر پہلی اشاعت کے لیے لکھا تھا وہ بھی ناپید تھا۔ خوش قسمتی سے یہ دونوں تحریریں مجھے اپنے پیارے دوست اور بہت اچھے شاعر اور خاکہ نگار اعجاز رضوی کے گھر سے مل گئیں جو اَب گل موسم خزاں کی تیسری اشاعت میں شامل ہوگئی ہیں۔ پروف ریڈنگ کے دوران میں نے کچھ نظموں اور غزلوں میں ترمیم و اضافہ بھی کیا ہے، اس خیال سے کہ تخلیقی سفر میں ترمیم و اضافہ بلکہ ردّو قبول کو بھی شاعر ادیب کے Progressiveاور مثبت رویّے کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے۔

میں نے صفدر سے وعدہ کیا تھا کہ اس کے ادارے کے زیرِاہتمام شائع ہونے والی دونوں کتابوں کی تقریبِرونمائی اکٹھی کریں گے مگر تب سے اب تک میں کسی ایسے دن سے ہاتھ ہی نہ ملاپایا جس کی شام اپنے دوستوں کو اکٹھا کرسکتا۔تب سے یہ وقت آگیاکہ گل موسم خزاںکاتیسراایڈیشن پریس میں جارہا ہے۔

زندگی نے ویسے بھی ہمیں سستانے کے لیے اپنی چھاؤں میں کب اتنی جگہ دی ہے کہ تازہ دَم ہوپاتے۔جب میں نہیں تھا اور جب میں بچہ تھا اُس زمانے میں پاکستان کے وجودکے اندر جو شکست وریخت ہوتی رہی، اُس کا سچ جھوٹ کتابوں میں پڑھا۔1971ء میں آدھا پاکستان ہمارے وجود سے کٹ گیا۔1977ء تک اس آدھے زخمی وجود پرہمت وجرات کے پھائے رکھنے میں گزرے،پھر گیارہ سال تک باقی ماندہ پاکستان سے سورج ناراض رہا۔اگلے بارہ چودہ سال تک سیاسی شعبدہ باز ایک نئے رُخ سے اس کے مندمل وجود کے کھرنڈنوچنے میں لگے رہے۔ پھر 1999ء کے آسمان سے ایک نئی ڈکٹیٹرشپ اُتری اورہمیںٹوئن ٹاورزکی طرح زمیں بوس ہوتے ہوتے آٹھ سال لگ گئے ۔اور اب تو شکاری مچانوں سے اُتر کر اور خندقوں سے نکل کر ہمارے سامنے آگئے ہیں۔اور ہم ایک مجسم سوال کی طرح خود اپنے سامنے کھڑے ہیں۔کچھ بھی نہیں بدلا۔ یہاں میں یکم جولائی 1991ء کے لکھے ہوئے اپنے بارے میں ایک نوٹ جو گل موسم خزاں کے پہلے ایڈیشن کے فلیپ کے طور پر شائع ہوا تھا اس کا آخری جملہ درج کرتا ہوں۔

کچھ بھی نہیں بدلا، صرف تبدیلی کی خواہش اس خطّے کی آب و ہَوا میں سوکھے بادلوں کی طرح گرجتی رہی ہے۔ گل موسم خزاں، اسی تشنہ کامی اور اسی خواہشِ ناتمام کاپیش لفظ ہے۔

لگتا ہے ابھی 1971ء نہیں گزرا۔ 1977ء ابھی تک کال کوٹھڑی میں سسک رہا ہے۔1979ء ابھی تک پھانسی گھاٹ پر لٹک رہا ہے اورگزشتہ آٹھ نو سال ٹوئن ٹاورز کے ملبے تلے دبے کسی معجزے کے منتظر ہیں۔
ایوب خاور
مئی2009

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE