Urdu Manzil


Forum
Directory
Overseas Pakistani
 

گل زار کی بات

(شاعر،افسانہ نگاراورفلم ڈائرکٹر)

میں شاعری کو ایسے ہی سپ (SIP)کرتا ہوں، دھیرے دھیرے مہکتی ہوئی گرم چائے کی طرح یا برف میں پگھلتی ہوئی وہسکی کی طرح، ہونٹوں کے اُوپر سے سرکتی ہوئی، زبان کو چھوتی ہوئی، حلق سے نیچے اُترتی ہے اور پورے سسٹم(وجود)میں گھلتی چلی جاتی ہے، جسم کا درجہ حرارت مدھم مدھم بڑھنے لگتا ہے۔ میں ایوب خاورکے شعر بھی اسی طرح سپ (SIP)کرتا ہوں، پھونک پھونک کرچسکیاں لے کر حلق سے نیچے اُتارتا ہوں۔

ایوب خاور کا طرزِ اظہار خالص اس کا اپنا ہے۔ ایک شاعر کو جو بات دوسرے شاعر سے الگ کرتی ہے وہ اس کی آواز کا ٹمبر(Timber)ہے۔ بولتے ہوئے ہونٹوں کی بناوٹ سب کی الگ ہوتی ہے۔ چاہے وہ ایک ہی لفظ کیوں نہ بول رہے ہوں لیکن محبت شعر کے دونوں مصرعوں کی بناوٹ لگتی ہے۔ خیال کو جو چیز نثر سے چھان کر شاعری بناتی ہے وہ کہنے کا ڈھنگ ہے، اس کی اپنی موسیقی ہے، سرتال ہے، ردھم ہے جس پرپاؤں رکھ کر مصرعے چلتے ہیں۔ مجھے ایوب خاور کے مصرعوں کی چال بہت خوب صورت لگتی ہے، لمبے لمبے مصرعے بڑے چھوٹے چھوٹے قدموں سے آگے بڑھتے ہیں۔ہر بار لگتا ہے مصرع کتھک کی چال چل رہا ہے۔

بات یہ ہے کہ ایوب خاور کی شاعری میں کلاسیکیت اور جدیدیت کے ایسے بھرپور ذائقے گھلے ہوئے ہیں کہ ان میں سب کو اپنی اپنی طرح کا رَس مل جاتا ہے۔ میں تو اس وقت بھی قطرہ قطرہ اس کے مصرعے سپ (SIP)کررہا ہوں۔

دل کی چوکھٹ سے لگا بیٹھا ہے تنہائی کا چاند

اور اچانک کسی جانب سے اگر تو نکل آئے!

آئینہ سامنے رکھیں تو نظر توُ آئے

تجھ سے جو بات چھپانی ہو، کہا کس سے کریں

ہاتھ الجھے ہوئے ریشم میں پھنسا بیٹھے ہیں

اب بتا! کون سے دھاگے کو جُدا کس سے کریں

بات جو دل میں دھڑکتی ہے محبت کی طرح

اس سے کہنی بھی نہیں، اس سے چھپانی بھی نہیں

کچے ایندھن میں سلگنا ہے اور اس شرط کے ساتھ

تیز کرنی بھی نہیں آگ بجھانی بھی نہیں

یہ جو انصاف طلب لوگ کھڑے ہیں صاحب

کیا کریں آپ سے اب آپ کا سر مانگتے ہیں

دل کی رگ رگ نچوڑ لیتا ہے

عشق میں یہ بڑی مصیبت ہے

خلوت حسن تغافل کبھی ہم آئیں گے

کنج لب میں سے کوئی نظم چرانے کے لیے

ایوب خاورٹیلی وِژن کا ڈراما پروڈیوسربھی ہے،اعلیٰ درجے کا ڈائریکٹر ہے اور اس کے کریڈٹ پر بہت مشہور ڈرامے اورسیریلز ہیں ۔ا س کی جبلت میں شاعری اورڈراما کوٹ کوٹ کر بھرا ہوا ہے۔ اللہ اسے نظر بد سے بچائے، دوسری کتاب بہت وقفے سے آئی ہے،تیسری جلد ہی آنی چاہیے۔ مجھے فنون میں اس کی شاعری اور ٹی وی پر اس کے ڈراموں کا انتظار رہتا ہے۔

گل زار  شاعر،افسانہ نگاراورفلم ڈائرکٹر

.....................................................

بہت کچھ کھو گیاہے

گلزار

یہ دوسری بار ہے کہ میں ایوب خاور کے مجموعے کے لیے پیش لفظ لکھ رہا ہوں۔ سچ تو یہ ہے کہ وہ پیش پیش ہیں اور میں پیروی کررہا ہوں۔

اُس مجموعے اور اِس مجموعے کے درمیان قریب پانچ سال کا وقفہ ہے۔ یہ بلند قامت شخص چلتا بھی ہے تو لمبے لمبے ڈگ بھرتا ہے۔ ادب کے صفحوں پر بھی وہ ایسے ہی قدم اُٹھاتا ہے۔ ایک ذاتی خیال ہے میرا کہ تخلیق میں وقفے ضروری ہوتے ہیں۔ کہیں رُک کر سانس لینا اور پھر چلنے لگنا، کہیں سیدھی راہ چھوڑ کر،کوئی موڑ مڑجانا، یا اچانک کوئی پگڈنڈی سر اُٹھا کر دیکھے تو کچھ دیر اُس کے ساتھ چل دینا۔ وہ کسی شاہراہ سے جاکر نہ ملے تو خود ہی کوئی نئی راہ نکال لینالیکن وقفے ضروری ہوتے ہیں،خود بینی کے لیے،ورنہ تخلیق کار، خصوصاً شاعر،خود کو دُہرانے لگتا ہے اور اکثر یوں محسوس ہونے لگتا ہے کہ شاعر اُسی راہ سے واپس لوٹ رہا ہے جس راہ سے آگے جارہا تھا۔
 

لیکن زندگی تومسلسل واقع ہوتی رہتی ہے ۔ وہ تو وقفہ نہیں لیتی۔ رُکتی نہیں، اور تخلیق کار، اگر ایوب خاور جیسا حساس شاعر ہو تو وہ کیسے رُک جائے۔ اُس کی اُپج تو سانس بھی نہیں لیتی۔ زندگی مسلسل اُس کے اندر اُبلتی رہتی ہے اور وہ اُس کی بھاپ کو روک نہیں پاتا۔ اب وہ نئی نئی راہیں تلاش کرتا ہے اور نئے نئے شعبے اختیار کرلیتا ہے۔ اِسی پانچ سالہ وقفے کے دوران ایوب خاور اپنے منظر ناموں میں پہلے سے زیادہ چمک اُٹھے۔ فلموں میں اُن کے نغمے بھی سنائی دیے اور ٹیلی وِژن پر اُن کی موجودگی پہلے سے کہیں زیادہ نکھر آئی۔

پانچ سال بعد،وہ ایک بار پھر اُس شاہراہ پہ بھی نظر آرہے ہیں جس کا نتیجہ اُن کا تازہ ترین مجموعۂ کلام ہے۔

پچھلے مجموعے میں کہاتھا۔

ساری دنیا میں ایک تم سے ہی

اب ملاقات نہیں ہو پاتی

اب فرماتے ہیں۔

اگر ہم مل نہیں سکتے، یہ دِل اب کھِل نہیں سکتے

تو پھر تکیے کو منہ پر رکھ کے رونا کیا ضروری ہے

پہلے کہا تھا۔

دل کی رگ رگ نچوڑ لیتا ہے

عشق میں یہ بڑی مصیبت ہے

اب فرماتے ہیں۔

عشق تو خیر کہاں کا تھا، مگر جانِ جہاں

نوکِ مژگاں میں مہ و سال پرونے پڑے ہیں

اِک وحشتِ بے نام نہیں چھوڑتی دل کو

اِک ہجر ہے اور ریت کا اُڑتا ہوا دریا
 

پہلے ایک تنہائی کا احساس تنگ کرتا تھا۔

پلکیں اوڑھ کے سو جائے گا ہر منظر

اور اکیلا چاند فلک پر جاگے گا

اب تنہا ہیں مگر حوصلہ ہے۔

بجھا سکے تو بجھا دے کہ میری عادت ہے

دِیا جلا کے ہمیشہ ہوا میں رکھتا ہوں

میں نے پڑھااورآگے بڑھ گیا۔ حسبِ معمول!

رات بچھالی دشت میں

چاند،سرھانا کرلیا

خواب کی چادر اُوڑھ لی

ہجر ازالہ کرلیا

خاورِخستہ جاں نے بھی

دیکھ! گزارا کرلیا

اس مجموعے میں سیریل اور ڈراموں کے منظر نامے بھی نظر آتے ہیں۔

ڈرامادُھند کے لیے لکھی گئی ایک نظم سنئے۔

برف گنگناتی ہے

رات چلنے لگتی ہے

گہری نیند کا جنگل،اک ذرا سی آہٹ سے

 سرسرانے لگتا ہے

دل کی ٹمٹماہٹ میں خوف کھوئے جانے کا

 کسمسانے لگتا ہے

برف گنگناتی ہے

رات جلنے لگتی ہے

ڈراما چٹان کے لیے نظم ہے۔

زندگی وہ دھارا ہے

جس کی تیز لہروں میں

آدمی کو بہنا ہے۔

ایک ادا جو اُن کی تب بھی بہت بھلی لگتی تھی۔ وہ اب بھی اُتنی ہی اچھی لگتی ہے۔ نظموں میں کتھک کی چال چلتے ہوئے لمبے لمبے مصرعے،اور معنی کہیں چھوٹتے نہیں۔ گھنگھروؤں کی طرح قلم سے لپٹے رہتے ہیں۔

میں نے دیکھا، اُس کی آنکھوں میں کئی صدیوں کا گہرا

زرد سورج تھا کہ جس کا عکسِ وارفتہ مری نظموں کی

سطروں اور ادھوری خواہشوں کی شام سے لپٹا

پڑا تھا اور کمرا دونوں سمتوں سے مقفّل تھا!

ایک چھوٹا سا حوالہ اپنے لیے پیش کردوں۔ پانچ سال پہلے میں ایوب کو کم سمجھ پایا تھا۔ پانچ سال بعد اب اور بھی کم سمجھ پاتا ہوں ،اِس لیے کہ وہ پہلے سے بہت وسیع ہوگئے ہیں۔ بڑے ہوگئے ہیں۔ وہ بڑے شاعر ہیں۔ ایوب کا کہنا ہے۔

تم کہتے ہو

نظم لکھو

اور اپنی اس اک بات کو خاور

مصرعوں میں زنجیر کرو

میں کہتا ہوں

درد میں لپٹی

سوگ میں ڈوبی

روگ کی روگی اس اِک بات کے کتنے معنی نکلیں گے

کیا تم نے یہ سوچا ہے؟

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE