Urdu Manzil


Forum

Directory

Overseas Pakistani

 

گلِ موسم خزاں                                      ایوب خاور

حمدیہ

برگِ گل، شاخ ہجر کا کر دے

اے خدا! اب مجھے ہرا کر دے

ہر پلک ہو نم آشنا مجھ سے

میرا لہجہ بہار سا کر دے

مجھ کو روشن مرے بیان میں کر

خامشی کو بھی آئینہ کر دے

بیٹھ جاؤں نہ تھک کے مثل غبار

دشت میں صورتِ صبا کر دے

میری تکمیل حرف و صوت میں ہو

مجھے پابند التجا کر دے

کون دستک پہ کان دھرتا ہے

تو مرے ہاتھ دل کشا کر دے

اے جمالِ دیار کشف و کمال

موجۂ رنگ کو نوا کرے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نعتیہ

یہ کس مقام سے روشن ہوا کہاں ترا نام
 

چراغ اور اندھیرے کے درمیاں ترا نام
 

مثالِ موجِ صبا قریۂ نگاہ میں ہے
 

مرے زمانۂ حیرت کا پاسباں ترا نام

ازل مقام سے پہلے ابد مقام کے بعد

جہاںجہاں پہ خدا ہے وہاں وہاں ترا نام

دلوں کے قفل کھلیں، آنکھ پر کھلیں منظر

حبیبِ رب سحر! جب بھی لے زباں ترا نام

یہی کہ آئینہ خانہ ہے کائنات مگر

صفاتِ آئینہ کو عکسِ جاوداں ترا نام

لبوں سے حرفِ دعا کے بچھڑنے سے پہلے

زوالِ موسمِ جاں پر ہو مہرباں ترا نام

ہوائے مکہ و بطحا کی ہو رِدا سر پر

دلِ شکستہ میں جب بھی ہو ضوفشاں ترا نام

مرا جواز فقط یہ کہ اُمّتی ہوں ترا

ترا جواز کہ ہے وجہِ دو جہاں ترا نام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سرِ دشتِ کرب و بلا ابھی وہی رنگِ ماہِ تمام ہے
 

وہی خیمہ گاہِ سکینہ ہے وہی سجدہ گاہِ امام ہے
 

ابھی چشم و دل سے چھٹے نہیں، ترے صبر و ضبط کے مرحلے
 

وہی صبر و ضبط کے مرحلے، وہی تیرے قتل کی شام ہے
 

وہی مشک شانۂ صبر پر، وہی تیر پیاس کے حلق میں
 

وہی آب جوئے فرات ہے، وہی اس کا طرزِ خرام ہے
 

وہی شامِ کوفہ ہے چار سو، وہی سطرِ وعدہ لہو لہو
 

وہی نوکِ خنجر تیز ہے، وہی حرفِ حیلۂ خام ہے
 

وہی ماتمِ مہِ کربلا وہی حاصلِ دلِ مبتلا
 

یہی رنگ ہے، میرے نطق کا، یہی میرا رنگِ سلام ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ماں

ماں!ترے قدموں تلے
 

جب راکھ اُڑتی ہے تو سینے میں خلا جیسی کوئی شے گونجتی ہے
 

میری بینائی کے حصّے میں تو اب تک صرف تیرے چپ لبوں کا زہر آیا ہے، مری بینائی جس نے آج تک تیرے
 

 لہو روتے ہوئے قدموں کے نیچے راکھ دیکھی ہے

بھرے کھیتوں میں فصلیں کاٹنے والی جوانی

زردپھولوں کی طرح سنسان آنکھوں کی کہانی کہتے کہتے آج کس منزل پر پہنچی ہے، مجھے اس کی خبر تو نہیں، تیرے محبت ڈھونے والے دل نے اپنی اجرتوں میں اپنے بیٹوں کے علاوہ کیا نہیں پایا مجھے اس کی خبر بھی تو نہیں، ہم خشک پتوں کو جلا کر سردیوں میں اپنے چھوٹے چھوٹے ذہنوں کو بڑے لوگوں کے قصّے بانٹتے تھے، ہم کہ تیری جاگتی آنکھوں کی لَو میں خواب جیسی کوئی دنیا دیکھتے تھے

صبح کاذب کی صدا

چکی کے پاٹوں اور تیرے ہاتھ کے چھالوں کے بیچ

اک گیت کی صورت اُترتی تھی، وہ گیت اب کھو گیا ہے

توبھی اب چپ ہوگئی ہے اور خلا ویسے کا ویسا ہے

ماں!مرے سینے میں

تیری مامتا کا نور تو اب بھی اُترتا ہے مگر اقرار کی ساعت ہمیشہ سے اَدھوری ہے، نہ جانے کون سا کوہِ گراں ہے تیرے ہاتھوں میں کہ اب تک تیرے ہاتھوں کے لیے چہرا ترستا ہے، تجھے دیکھوں تو جی یہ چاہتا ہے، تجھ سے پوچھوں

ماں!یہ کن روگی زمانوں کے

بھروسے پر ابھی تک جی رہی ہو، کون سے صحراؤں میں اب تک ترے دریا روانی رو رہے ہیں، کون سے دشت و جبل ہیں جن میں تیری عمر کا بے رنگ سنّاٹا سفر طے کررہا ہے اور یہ کن کم زور دیواروں کے سائے میں تری تقدیر کی

 چمپاچمیلی بجھ رہے ہیں

ماں!یہ توُ ہے یا کوئی خیمہ

طنابوں کی شکست آثار مٹھی سے نکل کرزرد موسم کی ہَوا میں

 لڑکھڑا تا ہے

یہ میں ہوں یا کوئی سایہ تری ممتا کی

ٹھنڈی روشنی سے ٹوٹ کر پاتال اندر ڈوبتا جاتاہے ہم دونوں محبت کی گواہی کی طلب میں اپنے اپنے دل کی جانب رُخ کیے اپنے خدا سے پوچھتے ہیں

 حشر کب تک آئے گا!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سات سروں کا بہتا دریا تیرے نام

ہر سر میں ہے رنگ دھنک کا تیرے نام

جنگل جنگل اُڑنے والے سب موسم

اور ہَوا کا سبز دوپٹہ تیرے نام

ہجر کی شام، اکیلی رات کے خالی در

صبح فراق کا زرد اُجالا تیرے نام

تیرے بنا جو عمر بتائی ، بیت گئی

اب اس عمر کا باقی حصّہ تیرے نام

ان شاعر آنکھوں نے جتنے رنگ چُنے

ان کا عکس اور مرا چہرا تیرے نام

دکھ کے گہرے نیلے سمندر میں خاور

اس کی آنکھیں ایک جزیرہ تیرے نام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخر کس دن

آخر کس دن

اس کھڑکی میں

صبح بہار کی آنکھ کھلے گی

کس دن کنج خواب سے باہر

وصل کا پھول کھلائے گی

ان آنکھوں کی اوٹ میں چھپ کر

کس دن آخر رنگ لباس اُتاریں گے

اور کس دن خوشبو ان ہونٹوں کے

خواب کنارے چھو کر مجھ میں لمس کی لَو مہکائے گی

آخر کس دن

موجِ خزاں اُس آنچل کے سائے میں سمٹی

اصلِ بہار چرائے گی!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ضبط کرنا نہ کبھی ضبط میں وحشت کرنا

اتنا آساں بھی نہیں تجھ سے محبت کرنا

تجھ سے کہنے کی کوئی بات نہ کرنا تجھ سے

کنجِ تنہائی میں بس خود کو ملامت کرنا

اک بگولے کی طرح ڈھونڈتے پھرنا تجھ کو

روبرو ہو تو نہ شکوہ نہ شکایت کرنا

ہم گدایانِ وفا جانتے ہیں اے درِ حسن!

عمر بھر کارِ ندامت پہ ندامت کرنا

اے اسیرِ قفسِ سحرِانا دیکھ آکر

کتنا مشکل ہے ترے شہر سے ہجرت کرنا

پھر وہی خارِ مغیلاں ، وہی ویرانہ ہے

اے کفِ پائے جنوں پھر وہی زحمت کرنا

صورتِ ماہ منیر اب کے سرِ بام آکر

ہم فقیروں کو بھی کچھ رنج عنایت کرنا

جمع کرنا تہہِ مژگاں تجھے قطرہ قطرہ

رات بھر پھر تجھے ٹکڑوں میں روایت کرنا

کام ایسا کوئی مشکل تو نہیں ہے خاور

مگر اک دستِ حنا رنگ پہ بیعت کرنا
.........................

تجھے کس یاد کی نسبت سے ہم کو یاد کرنا ہے

تجھے کس یاد کی نسبت سے ہم کو یاد کرناہے

نہ ہم نے تیری آنکھوں میں ستاروں کی چمک دیکھی

نہ ہم نے تیرے ہونٹوں کی لرزتی پتیوں پر

اَن کہے لفظوں کی شبنم تیرتے دیکھی ،نہ ماتھے پر کوئی مہتاب دیکھا اور نہ کانوں میں لہکتی بالیوں کے رنگ میں

 مہتاب کرنوں کا ہنر دیکھا

ترے آنچل کا ریشم سینۂ خالی سے لپٹا ہے

نہ تیرے موم ہاتھوں کی دھنک پوروں کا جادوہی

 مشامِ جاں میں اترا ہے

بس اک خوابِ گریزاں کی طرح پلکوں کو چھو کر لوٹنے والے

تجھے کس یاد کی نسبت سے ہم کو یادکرنا ہے

ہجومِ مہرباں پہلے بھی اتنا کم نہ تھا جاناں

کبھی ساحل کی گیلی ریت پر کچھ دیر ننگے پاؤں رک کر دیکھنا پاؤں کے تلووں سے عجب انداز سے پانی کی لہریں ریت کے شفاف ذرّوں کو چرالے جائیں گی، کچھ یوں لگے گا جیسے پاؤں ریت کے اندر مسلسل دھنس رہے ہیں، زندگی کے مسئلے بھی اک ہجوم مہرباں کی طرح یوں ہی پاؤں کی مٹّی چراتے ہیںہمارے پاؤں کی مٹّی چرائی جاچکی ہے

 اب ذرا فرصت ملی تو عمر رفتہ پر نظر کی ،دیکھتے کیا ہیں کہ ہم تو

اس ہجومِ مہرباں سے جنگ میں ساری کمائی ہار بیٹھے ہیں

بس اک دھڑکن ہے جو ویرانۂ دل میں تماشا کررہی ہے

کیا خبر تھی، زندگی کے مسئلوں کا یہ ہجومِ مہرباںجب

آدمی کو گھیر لیتا ہے، لہو کا آخری قطرہ تک اس کے محنتی ہاتھوں کی پوروں سے ڈھلک جاتا ہے، تب جاکر اسے ترکے میں اک یہ خیمۂ ارض و سما اور اک چراغِ شام ملتا ہے

ہمیں اب اس چراغِ شام کی ٹھنڈی ،سجیلی

دودھیاچھاؤں میں بیٹھے بیٹھے تجھ کو یاد کرنا ہے

مگرخوابِ گریزاں کی طرح پلکوں کو چھو کر لوٹنے والے

تجھے کس یاد کی نسبت سے ہم کو یاد کرنا ہے

نہ ہم نے تیری آنکھوں میں ستاروں کی چمک دیکھی

نہ ماتھے پر کوئی مہتاب دیکھا ہے

تجھے کس یاد کی نسبت سے ہم کو یاد کرنا ہے
.......................

نذرِمجیدامجد

مہک رہا ہے ہر اک شاخِ گل پہ توُ، تیرا غم

نظر اُٹھاؤں تو دنیا ہے ہو بہو تیرا غم

لہو کی آنچ میں شامل ہے تیری یاد کا نور

رواں دواں ہے رگوں میں اک آبجو، تیرا غم

اُتر رہے ہیں سرِ چشم قافلوں کی طرح

شکستہ خواب، تھکن، چاندنی کی لُو، تیرا غم

چٹخ گیا جو کبھی میرے ضبط کا شیشہ

ہوائے شام میں مہکے گا کُوبہ کُو تیرا غم

گلی گلی تیری بے مہریوں کی زرد ہوا

نفس نفس تیری خوشبو ، سبو سبو تیرا غم

سکوتِ شام کہ مہکے گا جب رگِ جاں میں

تو لوحِ شب پہ لکھوں گا اک آرزو، تیرا غم

بس ایک وقفۂ و اماندگی تھا ، موت اپنی

کھلی جو آنکھ تو پھر سے تھا رُوبرو تیرا غم
......................

ملال کی ایک رات

کچھ نہیں ہے

میرے آئینہ و مہتاب و سبوخالی ہیں

صفحۂ دل کسی معتوب شہنشاہ کی مسند کی طرح

حرمتِ لفظ ومعانی بھی گنوا بیٹھا ہے

خطۂ عمر معطل ہے وجود

عالمِ ہجر میں زنجیر ہے یہ خلوتِ ذات

آئینہ بابِ ندامت ہے اور اس بابِ ندامت سے

گریزاں میرا عکسِ متروک
 

عرصۂ وقت کے دامن میں
 

کوئی شاخِ سحر ہے نہ کوئی شامِ جمال
 

 مگر اِک رنگ ِملال
 

اے دیارِ رُخِ آیندہ کی مجذوب ہوا
 

لوحِ مہتاب سے اترے کوئی صبح تحریر
 

مگر اِس دشتِ شبِرزم کے سنّاٹے میں
 

وہ اندھیرا ہے کہ ان ہاتھوں سے گرتے ہوئے لمحے
 

 نہیں دیکھے جاتے
 

چشم حیراں پہ برستے ہوئے نیزے نہیں روکے جاتے
 

ایک اندوہ ِمسلسل کے سوا
 

برزخِ جاں میں کوئی سنگِ سزا ہے نہ کوئی ساعتِاجر
 

سطرِ آیندہ!تجھے حرفِ ملامت سے کیا ہے آغاز
.........................

 

یہ جو خیمہ گاہِ جمال خواب ہے آئینہ
 

کفِ خاک میں ہو تو پھر سراب ہے آئینہ
 

فرسِ جرس! یہ سفر ہے ہجر و وصال کا
 

ذرا دیکھنا کہ تہہِ رکاب ہے آئینہ
 

تری آہٹوں کے سبھی گمان اسی سے ہیں
 

تجھے دیکھنے کو یہ ماہ تاب ہے آئینہ
 

کوئی حرفِ اِذن کہ آنکھیں کھول کے دیکھ لوں
 

پسِ جاں غبارِ شکست خواب ہے آئینہ
 

یہیں تیری میری رتوں کے عکس گلے ملے
 

انھیں منظروں میں کوئی گلاب ہے آئینہ
.................................

زندگی اور موت کے درمیان ایک نظم

زندگی!ہم تری دہلیز پہ آبیٹھے ہیں

ہاتھ میں کاسۂ تدبیر ہے

آنکھوں میں کسی موسمِ گل رنگ کی خواہش ہے لبوں پر ترے بے مہرزمانوں کے لیے شکوے ہیں ،زندگی ہم تری

 دہلیز پہ آبیٹھے ہیں

اک ذرا دیکھ

کہ ہم نرم مزاجوں کے لیے

کون سی رات ہے جس رات کے آنچل میں ہوا

خواب کو آئینہ خواب میں سر کرتی ہے

کون سا دن ہے کہ جس دن کا ظہور

حرفِ دل کے لیے صحرائے تمنّا کا سفر کرتا ہے

اک ترے لمس کی خاطر ہم نے

خیمۂ دل میں جلائے ترے ہونے کے چراغ

 ہاں مگر کوئی سراغ

تیری آہٹ،تیری آواز، قدوقامت وخوشبو کا سراغ

اک ذرا دیکھ! کہاں ہم ہیں کہاں تیرے چراغ

جاں بہ لب ہیں

مگر اک حرف ِتسلی کے لیے

زندگی ہم تیری دہلیز پہ آبیٹھے ہیں
.........................

انتظارِ شکستہ

اِسی اک آئینے کا عکس ہے

میری محبت بھی

تمھارے چاہنے والوں کی حیرت بھی
 

یہ حیرت آئینے کے ٹوٹنے تک ہے
 

ہمارے ہاتھ سے سانسوں کی ڈوری چھوٹنے تک ہے
.......................

تمثال مثال ہے کہ توُ ہے

یہ تیرا خیال ہے کہ توُ ہے

ہر داغ چراغ ہو رہا ہے
 

یہ شانِ زوال ہے کہ توُ ہے

تعمیر کاخ و کو پہ خنداں

گردِ مہ و سال ہے کہ توُ ہے

سینے میں چمک دھمک رہی ہے

آہنگِ جمال ہے کہ توُ ہے

آنکھوں میں چمک رہا ہے کیا کیا

یہ دل ہے، سوال ہے کہ توُ ہے

خاور مرے دل کی دھڑکنوں میں

اک عہدِ وصال ہے کہ توُ ہے
..................................

آپریشن تھیٹر میں ایک نظم

اپنی بیگم کے لیے

جنھیں میں تتلیوں کے نرم رنگوں کی طرح محسوس کرتا ہوں

مجھے چُھو کر وہ آنکھیں سرخ لمحوں سے اُدھر گم ہوتی جاتی ہیں

مری آنکھیں مگر اب تک کھلی رہنے کی مجبوری سمیٹے دنگ ہیں

کیا ڈھنگ ہیں بے مہر موسم کے جو دل پر

موت جیسی یخ حقیقت کی طرح اُترا چلا آتا ہے، آنکھیں بند کرلوں تو یہ منظر ڈوب جائے گا، وہ آنکھیں ڈوب جائیں گی جنھیں میں تتلیوں کے نرم رنگوں کی طرح محسوس کرتا ہوں

خدایا!سرخ لمحوں سے اُدھر مجھ سے محبت کرنی والی

تتلیوں کے نرم رنگوں جیسی دو آنکھیں ابھی کچھ دیر پہلے

 سوگئی ہوں گی مگر دل جاگتا ہوگا

وہ دل جس میں مرے دل کا سمندر گونجتا ہے

اوروہ لب جن کے کناروں سے چراغِ لمس کی لَو پھوٹتی ہے تو مرے لب جاگتے ہیں، سو رہے ہوں گے مگر دل جاگتا ہوگا
 

مجھے معلوم ہے اس کی سماعت بھی ترنم آشنا ہے
 

ہاںمگر اس وقت اک صحرائے بے اندازہ کی ہو میں کہیں معدوم ہوتی جارہی ہوگی، تھکن کی آخری حد پر
 

 گلابوں سے لدے بازو بھی اب تو گر چکے ہوں گے
 

یہ کیسی سرسراتی ساعتیں، دل کاٹتی، رستہ بناتی
 

میرے سینے میں اُترتی آرہی ہیںربِّ کعبہ!
 

ربِّ کعبہ
 

تتلیوں کے نرم رنگوں جیسی آنکھوں کو، سمندر کی طرح
 

بے تاب دل کو اور گلابوں سے لدی بانہوں، چراغِ لمس
 

 کی لَو میں لرزتے زرد ہونٹوں کو،سماعت کو اور اس کے نرم رُوکلیوں کی صورت نیم خوابیدہ بدن کو آیۃ الکرسی کے سائے میں بہت محفوظ رکھنا، تیری دنیا میں محبت کرنے والے اور
 

 محبت جیتنے والے بہت کم ہیں
.................

آنکھ کی دہلیز سے اترا تو صحرا ہو گیا

قطرئہ خوں پانیوں کے ساتھ رسوا ہو گیا

خاک کی چادر میں جسم و جاں سمٹتے ہی نہیں

اور کچھ رنگِ زمیں بھی دھوپ جیسا ہو گیا

ایک اک کرکے مرے سب لفظ مٹّی ہو گئے

اور اس مٹّی میں دھنس کر میں زمیں کا ہو گیا

تجھ سے کیا بچھڑے کہ آنکھیں ریزہ ریزہ ہو گئیں

آئینہ ٹوٹا تو اک آئینہ خانہ ہو گیا

اے ہوائے وصل چل ، پھر سے گُلِ ہجراں کھلا

سر اُٹھا پھر اے نہالِ غم ، سویرا ہو گیا

اے جمالِ فن اسے مت رو کہ تن آسان تھا

تیری دنیاؤں کا خاور صَرفِ دنیا ہو گیا
............................

روبرو جاناں

ہمیں اب تک تری کچھ بھی نہ کہنے والی آنکھوں سے یہ شکوہ ہے
 

جو کمِ سن خواب ان آنکھوں میں منظر کاڑھتے تھے وہ کبھی تیرے لبوں کے پھول بنتے اورہمارے دامنِ اظہار

میں کھلتے

ہمیں ان مسکراتے چپ لبوں سے بھی شکایت ہے

ہمارے شعر سن کر کھل کھلاتے تھے مگر کچھ بھی نہ کہتے تھے

نہ جانے ایسے لمحوں میں تری سوچوں پہ کیا کیا رنگ آتے تھے

تجھے ہم سے چھپانے کے بھی تو سب ڈھنگ آتے تھے

ہمیں تیری محبت سے بھی شکوہ ہے

سمندر جیسی گہری تھی

مگر آنکھوں کی چھاگل سے چھلکتی تھی

جو ہم ایسے فقیروں کے دلوں پر اس طرح برسی

کہ ہریالی نے گھر اور دشت کی پہچان سے بے گانہ کرکے رکھ دیا، ہم کو یہ دنیا صرف تیرے حسن کی تجسیم لگتی تھی سو ہم بھی اور ہمارے خواب بھی، آنکھیں بھی، چہرا بھی

 سبھی کچھ تیری خاطر تھا

مگر تیری محبت نے

ہمیں اس چپ چپیتے کھیل میں جو دکھ دیے

اب تک انھیں تیری سراب آنکھوں سے

آئینہ مثال اک گفتگو کی آرزو ہے، روبروجاناں

..........

امکان

کبھی مرا حال دیکھنا ہو

تو اپنی آنکھوں میں جھانک لینا

کہ ہم جو برسوں سے لازماں لامکاں

کسی خواب سے دھندلکے میں جی رہے ہیں ،کب ایسے لمحے میں جی سکیں گے جو تم سے ،مجھ سے بچھڑکے دونوں

 جہان ویران کر گیا ہے؟
...............

کیوں چپ ہیں فراق کے ستارے

کچھ اس کے ہی نام کے اشارے

ٹوٹی ہوئی چوڑیوں سے کھیلیں

پوروں کے تھکے ہوئے کنارے

ہم سے یہ دیے کہاں بجھیں گے

یہ دل تو ہیں رت جگوں کے مارے

اک دن انھیں سنگ سالبوں سے

پھوٹیں کے محبتوں کے دھارے

پلکوں پہ اُتر رہی ہیں راتیں

آنکھوں میں سلگ رہے ہیں تارے

اے ربِّ ملال! اُس جہاں میں

پورے نہ ہوئے اگر خسارے!

ہم آبلہ پا کو کیا ، ہمیں اب
 

جس دشت میں قافلہ اتارے

کیسے تھے وہ دن جو ہم نے خاور

تجھ بن تیری آس میں گزارے
....................

اے غنیم انداز

مگر تجھ تک پہنچنے کا کوئی رستہ نہیں تھا

آنکھ اور دل کے بیاباں تیزسنّاٹوں ،جھلستی دھوپ اور گہری تھکن میں ایک پیاسے دل کی خاطر اک سمندر ڈھونڈتے تھے اور اپنی خواہشیں وہموں کی بے سایہ درودیوار پر لکھتے، اندھیری رات کے گنبد میں تیرے نام کی نیندوں سے تیرے خواب چنتے اور کسی سے کچھ نہ کہتے تھے

مگر تجھ تک پہنچنے کا کوئی رستہ نہیں تھا

اے غنیم انداز!اندھیرے میری مٹھی میں تھے جگنو تیری مٹھی میں ، سو اَب تک ایک پیاسا دل سمندر ڈھونڈتا ہے تیری خالی خالی آنکھوں سے خود اپنے دشت و صحرا میں اُتر

 جانے کا رستہ پوچھتا ہے

.........................

ہَوا کے رُخ پہ ، رہِ اعتبار میں رکھا

بس اک چراغ کوئے انتظار میں رکھا

عجب طلسمِ تغافل تھا جس نے دیر تلک

مری اَنا کو بھی کنج خمار میں رکھا

اُڑا دیے خس و خاشاکِ آرزو سرِ راہ

بس ایک دل کو ترے اختیار میں رکھا

فروغِ موسمِ گل پیش تھا سو میں نے بھی

خزاں کے زخم کو دشت بہار میں رکھا

نہ جانے کون گھڑی تھی کہ اپنے ہاتھوں سے

اٹھا کے شیشۂ جاں اس غبار میں رکھا

یہ کس نے مثلِ مہ و مہر اپنی اپنی جگہ

وصال و ہجر کو ان کے مدار میں رکھا

لہو میں ڈولتی تنہائی کی طرح خاور

ترا خیال دلِ بے قرار میں رکھا
.................

خواب بہت ضدی ہوتے ہیں

خواب بہت ضدی ہوتے ہیں

جلتی بجھتی پلکوں کی دہلیز اُتر کر آجاتے ہیں

دل مٹھی میں وہم دھڑکتے رہتے ہیں

زیرِ زمیں انہونی کے اندازے بہتے رہتے ہیں

نیند کے ہر پھیرے میں آنکھیں
 

پھول بنوں کے آتش رنگ زمانے سوچ کے ڈر جاتی ہیں رات کے بھاری دروازے کوکھول کے باہر آنے کی

 خواہش میں جاگتی رہتی ہیں

پھر بھی دروازے پر پہرہ دینے والیتنہائی سے

 آنکھ بچا کر، دھیان کے چوباروں سے پلکوں کی دہلیز اُتر آتے ہیں، انہونی کے قہر کی زد میں رہتے ہیں

خواب بہت ہی ضدی ہوتے ہیں

حریمِ حسن سے آنکھوں کے رابطے رکھنا

تمام عمر تحیر کے در کھلے رکھنا

حصارِ آئینہ و خواب سے نکلنے تک
 

شکستِ ذات کا منظر سنبھال کے رکھنا
 

یہ بارگاہِ محبت ہے ، میری خلوت میں
 

مرے حریف! قدم احتیاط سے رکھنا
 

فرازِ کوہِ شبِ غم سے دیکھنا ہے اُسے
 

مرے خدا میری قسمت میں رت جگے رکھنا

گرا دیا جسے اک بار اپنی نظروں سے

پھر اس کو خواب کی حد سے بھی کچھ پرے رکھنا
........................

سینہ خواب کھلے

سینۂ خواب کھلے

جس طرح پیار میں ڈوبی ہوئی آنکھوں پہ لرزتی ہوئی

 پلکوں کا نشہ کھلتا ہے

جس طرح بند کتابوں پہ کسی پھول کے کھلنے کا گماں کھلتا ہے
 

جس طرح ہاتھ کی پوروں پہ کبھی
 

پہلے پہلے سے کسی تجربۂ لمسِ محبت کا اثر کھلتا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سینۂ خواب کھلے
 

سینۂ خواب کھلے اور میں دیکھوں وہ کم آثار جوانی کا خمار
 

وہی حیرت جسے میں نے فقط ایک سانس کی ڈوری
 

میں پرولینے کی خواہش کی تھی
 

وہ تذبذب کہ جسے کم سن وکم خواب نگاہوں کے بھروسے نے

گلاب اور چنبیلی کی مہک بخشی تھی

مرتعش ہونٹوں پہ موہوم تبسم کا وہ احساس جسے

حرف وآوازبغیر

کعبۂ دل نے ترے چہرئہ گلفام پر مبعوث کیا

اورپھر میری نگاہوں کی طرف

تیرے آغاز کو بے دارکیا

اے سخن ساز نگاہوں والے

وقت نے عمرِ گزشتہ کے کئی باب لکھے

اور ہر باب کی دہلیز کسی خوابِ مقفل کی طرح گم سم ہے

کوئی دستک، کوئی آواز، کوئی حرفِ صبا

کوئی تدبیر کہ یہ لمحۂ موجودگزرجانے سے پہلے پہلے

کاش

اس خوابِ مقفل کا بھی سینہ کھل جائے

اورمیں دیکھ سکوں

تیرے موہوم تبسم کی کہانی کا حوالہ کیا تھا

اور اب مجھ سے گناہ گارِمحبت کی تباہی کا ازالہ کیا ہے
...........................

سطرآوارہ

رات برف باری میں

میری بے ثبات آنکھیں

لفظ لفظ بھٹکی ہیں

حرف حرف روئی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جاگے تھے حساب سے زیادہ

پیاسے ہیں سراب سے زیادہ

موسم کے عذاب جھیلنا ہیں

خوشبو کو گلاب سے زیادہ

دیکھیں گی ہمیشہ میری آنکھیں
 

تجھ کو ترے خواب سے زیادہ
 

کیا لمحۂ وصل تھا کہ جس میں
 

پڑھنا تھا نصاب سے زیادہ
 

جینے کو ترس رہے ہیں خاور
 

اک خواب ہے خواب سے زیادہ
 

 

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وطن کے لیے ایک نظم

کوئی خواب ہے
 

کوئی سبزخطۂ خواب ہے میری نیم بازنگاہ میں
 

مرے آئینے کے کنارمیں
 

مرے رَت جگوں کے شمار میں کوئی عکسِ گل ہے کہ حرفِ دل
 

کا جمال ہے ترے موسموں کی مثال ہے
 

کوئی خواب ہے
 

کہ مرے دنوں میں رواں شبوں کے گدازمیں
 

کسی صبح خاص کا نور ہے
 

کہ دھڑک رہا ہے مرے چراغ کی لَو میں اور مرے خاک داں کے خمیرمیں
 

 مری شاعری کے ضمیر میںکوئی خواب ہے
-

کوئی سبز خطہ خواب ہے
 

کہ نظر اُٹھاؤں تو روبرو ہے، چلوں تو راہ کے پیچ وخم میں
 

قدم قدم مری جستجو کا مآل ہے ، جو رکوں تو صورتِ کہکشاں
 

 مری کائناتِ ہنر کو مشعلِ راہ ہے
 

مرے حرف ساز قلم کی عزت وآبرو ہے، متاع ہے
 

 کوئی خواب ہے
 

 کوئی سبز خطۂ خواب ہے
 

 

اے خدائے شمس و قمر مجھے کوئی عمر دے
 

مری نیم باز نگاہ میں یہ جو خواب ہے
 

یہ جو سبز خط خواب ہے
 

یہ جو میری تھوڑی سی زندگی کا نصاب ہے
 

یہ جو میری ساری رُتوں کی فصلِ بہار ہے
 

اے خدائے شمس و قمر مجھے کوئی عمر دے کہ میں اس
 

نصاب بہار کو دلِ خستہ حال کی دھڑکنوں میں دھڑکنے والی دعاؤں کا وہ مزاج دوں،وہ مزاج دوں جو کبھی ملالِ خزاں کی زد میں نہ آسکے جو کبھی بلائے زوال وقحط کی دسترس میں نہ آسکے مگر ایک امن کا پھول اس میں کھلا رہے
..................................................

انتباہ

پاکستان میں1977کاایک تاریک دن

تم اپنی آنکھیں بچا کے رکھو

ابھی بہت سے عذاب باقی ہیں

خواب باقی ہیں، لفظ و معنی کی حد سے باہر گلاب موسم کی

 برف باری نے ڈس لیے ہیں

تم اپنی آنکھیں بچا کے رکھو

کہ آنے والا ہر ایک لمحہ

قیامتوں کا سفیر ہوگا

تم اپنی آنکھیں بچا کے رکھو

یہ خواب ہی اپنی زندگی ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کچی نیند کی دہشت

 بھٹو صاحب اوربے نظیرکی جیل میں

 آخری ملاقات کے حوالے سے

تو اب کوئی سمت ہی نہیں ہے

سفر کا امکان کچی نیندوں کا خواب سمجھو

غزال روحوں پہ
 

ہجر آثارکہر کے آسمان پھیلے ہیں، خیمہ گاہِ حیا ت میں

 اک دِیا جو روشن تھا،اپنی لَو سے بچھڑ رہا ہے

جو صبح روشن طلوع ہونا تھا

اس کی تقدیر کا ستارہ اب اپنا لنگر اُٹھا رہا ہے

اب آسماں اور زمین سب ایک ہورہے ہیں

نہ گنبد جاں میں گونج خوابوں کی اور نہ آنکھوں میں روپ کھلتے ہوئے لبوں کا، بس اب مسلسل فراق کی منزلیں ہیں اورہم ہیں، دشت و صحرا بگولہ واراُٹھ رہے ہیں، آنکھوں

 کے دائروں میں سمٹ رہے ہیں

جہاں جہاں تک یہ کہر کے آسماں کا پھیلاؤ دیکھتے ہو

وہاں وہاں تک تمام پھولوں سے ان کی خوشبوبچھڑ رہی ہے

 کہ صبح ہونے سے پہلے پہلے سکوتِ شب زاد کی معیت میں، سطحِ مرقد پہ زرد لمحوں کے بیچ جو کچھ صدائے زنجیر کو

 متاعِ صبا سے کہنا تھا،کہہ چکی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابھی جنازہ اُٹھا نہیں ہے
 

اپریل 1979

ہوادریچوں میں بند ہے اور خواب آنکھوں میں قید ہیں

اورآہٹیں راستوں میں زنجیر ہوگئی ہیں

محل سرا کے تمام دیوار و درمنقش سکوت اوڑھے ہوئے کھڑے ہیں

گزشتہ عمروں کی دھول معزول خلوتوں

میں چراغ کی بے لباس لَو سے گریز پا ہے اور آئینے

بے صفات و متروک تخت و ایوان کے حشم کو دوامِ عکس ملال

 کا غسل دے رہے ہیں

ابھی جنازہ اُٹھانہیں ہے

ہواجو ساکت کھڑی ہوئی ہے

اسے کہیں پراَنارکی اک کلی کی خوشبو پکارتی ہے

شکار گاہوں میں شاہ زادوں کے خیمے سنسان
 

اور دربان پتھروں کے مجسموں کی طرح کھڑے ہیں
 

مگرشکاری ہرن سے آگے نکل گئے ہیں
 

ابھی جنازہ اُٹھا نہیں ہے
 

سروں پر رات آگئی ہے، رَستوں کے پیچ وخم بھی
 

پہیلیوں میں بدل گئے ہیں
 

پلٹ کے آنے کی ساری اُمید ایک جادو کی قید میں ہے
 

ابھی جنازہ اُٹھا نہیں ہے
 

محل سرا کے کواڑ چپ ہیں
 

ستون خاموش،عہد زریں کے خواب
 

پردوں کے ساتھ لگ کر کھڑی کنیزوں کی سرد آنکھوں کی
 

 پتلیوں میں سلے ہوئے ہیں
 

حسب نسب ،تاج وتخت، خلوت مزاج، جلوت جلال
 

شہزادگی کا موسم، وزیر،رخ،فیل اور پیادے ،بساط
 

اپنی گزشتہ چالوں سمیت اب تک وہیں پڑی ہے
 

 اندھیرا اپنے عظیم لشکر سمیت محبوس عظمتوں کے خلاف ہر سمت خیمہ زن ہے، فصیل ہی کی طرح سے اس کے محافظوں کی نگاہ پتھر ہے، شہر کے سب کواڑباہر سے بند ہیں اور ہر ایک چہرے پر قفل کھلنے کی آرزو ہے
 

 سماعتوں کو منادی سننے کی جستجو ہے
 

سنو
 

ہر اک خاص و عام سن لے کہ
 

 کل علی الصبح سب سے پہلے جو شخص اس شہر بے پنہہ میں قدم رکھے گا وہ شخص عالم پناہ ہوگا، ہمارا وہ بادشاہ ہوگا
 

 

منادی والامنادی کرنے کے حکم کا منتظر ہے لیکن
 

 ابھی جنازہ اُٹھانہیں ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

ہم قدم پھر وہی اندوہِ سفر ہے کہ جو تھا
 

پھر وہی تیرے بچھڑجانے کا ڈرہے کہ جو تھا

پھر وہی چاک گریباں ہیں سر راہِ صبا

پھر وہی موسمِ گل پیشِ نظر ہے کہ جو تھا

لیلیٰ ء ہجر تری گردِ کفِ پا کی طرح

سینۂ خاک پہ اک خاک بسر ہے کہ جو تھا

زینۂ شب پہ کسی وعدے کی آہٹ نہ گماں

دلِ آئینہ میں اک عکس مگر ہے کہ جو تھا

آئینہ سنگ صفت تھا مگر اک نقشِ جمال

آج تک اصلِ ہنر، رزقِ نظر ہے کہ جو تھا

تجھے دیکھا تو ترے ہجر کا غم بھول گئے

مگر اک زخم، تہہِ دیدئہ تر ہے کہ جو تھا

دل جسے ہم پسِ دیوار اَنا دیکھتے تھے

آج بھی وہ اُسی بے مہر کا گھر ہے کہ جو تھا

اس گلی میں وہی اک رسمِ ملامت ہے جو تھی

ہم فقیروں کا بھی اک کاسۂ سر ہے کہ جو تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابھی موسم نہیں آیا

ضیاالحق کے مارشل لا کے حوالے سے

ابھی تک موسمِ گل لوٹ کر آیا نہیں

 کچھ دیر باقی ہے

ابھی اس درد کی چھاؤں میں سانسوں کو رواں رکھنے کا حیلہ

 ڈھونڈنا ہے

پاؤں میں مٹی کے جوتے، ہاتھ میں کشکولِ جاں

سر پر کلاہِ غم، قبائے گرد میں لپٹے بدن دیوارِ گریہ سے لگا کر بیٹھنا ہے اور اس موسم کا رستہ دیکھنا ہے جس کی خاطر ہم نے اپنی خاک کے ذرّوں سے اپنے گھر بنائے تھے

ابھی کچھ دیر باقی ہے

ابھی گلیوں، مکانوں کی چھتوں پر،ڈیوڑھیوں میں ،خامشی

 خنجربکف پہرے پہ فائز ہے

یہاں اس قریۂ عبرت میں اک قصرِ بلند و پر حشم ہے

جس کے فرشِ نیلمیں پر ایک انبوہِ غلاماں صف بہ صف خالی سروں کو اپنے سینے پر جھکائے ، ہاتھ باندھے، اپنے آقا سے وفاداری کا دَم بھرتا ہے، حاجت مند سائل کی طرح بے وزن لہجے میں سخن کرتا ہے، جیتا ہے نہ مرتا ہے

ذرا دیکھو

ذرااس قریۂ عبرت کے قصرِ پرُحشم سے اُس طرف دیکھو

ہوامحبوس ہے، برگ وثمر سے خالی پیڑوں کی

برہنہ ٹہنیوں کے ساتھ گرہیں ڈال کر باندھی گئی ہے اور زمستاں کی سنہری دھوپ ٹکڑے ٹکڑے کرکے شہر کی اونچی چھتوں پر چیل کوؤں کے لیے ڈالی گئی ہے، آتشِ گل سے چراغِ شام تک جو کچھ دلِ عشاق کو ورثے میں ملتا ہے اسیرانِ فرات و شام کے مانند زنجیر و سلاسل میں پرو کر صاحبِقصر وحشم کے سامنے لایا گیا ہے، پہرہ داروں نے دریچے،کھڑکیاں اور بھاری دروازے مقفل کردیے ہیں اور موسم ان دریچوں، کھڑکیوں اوربھاری دروازوں سے باہر ساکت و جامد کھڑا ہے، باریابی کی اجازت چاہتا ہے ماتمی رنگوں میں ڈوبا درد کا موسم حضورِ شاہ سے اپنے تن نازک پہ برگِ گل سجانے کی حمایت چاہتا ہے، بیڑیاں پہنے ہوئے لب بستہ و ساکن ہوا کے پاؤں میں خوشبو کی پائل باندھنے اور پھر اُسے آزاد کرنے کی سعادت چاہتا ہے

 لیکن اے کارِ جنوں!

لیکن اے کارِ جنوں

کارِ نمو آغاز ہونے میں ابھی کچھ دیر باقی ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوال

پوچھتے ہو

کہ بن پانیوں کے یہ دریا

کہاں ڈوبتے ہیں
 

کبھی اپنا چہرہ ٹٹولو

اورآنکھوں کے جل تھل میں

میری طرح ڈوب جاؤ

تمھیں ڈوبنے والے دریاؤں کے راز مل جائیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عمر بھر شامِ غمِ خواب کا راستہ دیکھا
 

شیشۂ جاں میں بس اک شخص کا چہرا دیکھا
 

خواب کی آب ستاروں کی طرح بجھنے لگی
 

نیند میں ڈوبے ہوئے شہر کا نقشہ دیکھا
 

بے نوائی تیری صورت میری آواز میں تھی
 

لفظ در لفظ اک آواز کا رشتہ دیکھا
 

چار جانب تھا اندھیرا میری بینائی کا
 

پسِ دیوارِ وفا، دن کا اُجالا دیکھا
 

زخم در زخم اک انگشتِ حنائی دیکھی
 

ریگ در ریگ چمکتا ہوا شیشہ دیکھا

تابشِ تیغ سے چندھیا گئیں آنکھیں خاور

دیکھنے والوں نے کب قتل کیا حیلہ دیکھا

...................

ایک ایسا آئینہ دے دے

 یومِ آزادی کے حوالے سے ایک نظم

یہ دن جب صبح کاذب کی مقدس دھندسے نکلے

 تو پلکیں کانپ اُٹھتی ہیں

اندھیرے کے پروں سے روشنی کی سرسراہٹ سن کے

 منظر جاگ اٹھتے ہیں

نشہ آنکھوں میں جاتی رات کا
 

زنجیر پاکی طرح ایسے ٹوٹنے لگتا ہے
 

سینے کی اندھیری کوٹھڑی سے یوں صدا سی آنے لگتی ہے کہ جیسے کوئی کہتا ہوکہیں ڈھونڈوتم اپنا آئینہ خانہ کہاں پر
 

 بھول آئے ہو
 

مگر یوں ہے کہ اپنی اپنی تنہائی کی بکل مار کر
 

سب سانس روکے چپ کھڑے ہیں اور بس تقدیر کے لکھے ہوئے کے منتظر ہیں، ربِّ کعبہ وہ جو حرف آغاز تھا اک پھول تھا، اُس پھول کے سائے میں ہم بھی اپنی اپنی خوشبوؤں کے ساتھ کھلنا چاہتے تھے اور کھلنے کی تمنّا میں سفر آمادہ تھے لیکن نہ
 

 جانے کب ہمارے پاؤں اپنی خاک سے بچھڑے
 

کب آئینہ ہمارے ہاتھ سے گر کر
 

چٹخنے کے انوکھے جبر سے گزرا
 

کب آنکھیں جاگتے میں سوگئیں، کیسے کہے کوئی
 

سبھی تو سانس روکے چپ کھڑے ہیں
 

اور کتابِ ذات کی سچائیوں کی رونمائی اتنی آساں کب رہی ہے، ربِّ کعبہ ایک ایسا آئینہ دے دے کہ جس کو
 

 سامنے رکھیں تو تیری کبریائی رنگ فرما ہو
 

اندھیرے کے پروں سے خواب چنتی
 

ایک ایسی صبح فردا کو اشارہ ہو
 

جو اپنی پلکیں کھولے اور ہماری سرزمیں
 

سورج مکھی کا کھیت ہوجائے
..........................

آئینوں میں خواب ایک سے ہیں

موسم سرِ آب ایک سے ہیں

ہر شخص کے دکھ الگ الگ ہیں

پڑھیے تو نصاب ایک سے ہیں

آنکھیں ہوں، ستارہ ہو کہ جگنو

یہ سارے شہاب ایک سے ہیں

یہ ہجر و وصال بھی عجب ہیں

دونوں کے عذاب ایک سے ہیں

اس کوفۂ تشنگی میں خاور

دریا و سراب ایک سے ہیں

....................................

راستے کا غبار ہیں ہم

عرصۂ انتشار ہیں ہم

ساری دنیا کے مہوشوں میں

ایک تجھ پر نثار ہیں ہم

زرد رُو ہوگئے ہیں، آخر

کشتگانِ بہار ہیں ہم

جو ہماری نگاہ میں تھا

اب اسی کا شکار ہیں ہم

حاصلِ عمر رائگاں ہے

یہ جو کچھ شرم سار ہیں ہم

لوحِ دل پر لکھا ہوا ہے

عشق سے پائدار ہیں ہم

حسن کی بارگاہ میں بھی

وقفۂ انتظار ہیں ہم

موجہ ء گل کے واسطے تو

ساحلِ بے کنار ہیں ہم

اس کو بھی کچھ خبر ہے خاور

کس لیے بے قرار ہیں ہم
....................

ہَوا کب سانس لے گی

تاریک دنوں میں سے ایک دن

یہاں جس شہر کی راتوں میں ہم دن کاٹتے ہیں

وہاں چہرے شناسائی کا دعویٰ کب کریں گے

ہَوا کب سانس لے گی

یہ بستی آسماں تک پھیلنے کی حرص میں دن رات کیوں چنگھاڑتی ہے

یہ دُوری جس پہ ہم اک دوسرے کو دیکھتے ہیں

اسی سیال آئینے میں خوشبو اور پانی کھیلتے ہیں

اسی خطِّ نظرپر چاند میرے اور تمھارے درمیاں

اک لمسِ گل اندام کی کرنیں کھلاتا ہے

مگر جب ہجر کی چادر پہ وحشت کاڑھتا ہے

تب ہَوا کے زرد آنچل میں کوئی بادل نہ آنسو اور نہ کوئی پھول ہوتاہے

لبوں پر پپڑیاں سی جمنے لگتی ہیں

نظر کے سامنے اک وقفۂ واماندگی سا ٹھہر جاتا ہے
 

مشامِ جاں سے سنّاٹوں کے لشکر پھوٹ پڑتے ہیں
 

یہاں جس شہر کے قدموں میں ہم دن کاٹتے ہیں
.................................

اُتر کر بامِ مینا سے کہاں ساغر میں رہنا ہے

یہ سودائے محبت ہے ہمیشہ سر میں رہنا ہے

بہت دن تک بہت سے خواب مٹّی میں ملانا ہیں

بہت دن تک پھر اس مٹّی کے کچے گھر میں رہنا ہے

گزرنا ہے کسی مہرِ محبت کے تغافل سے

نکل کر کوئے جاں سے عرصۂ محشر میں رہنا ہے

کسی کی یاد میں دل کو پگھلنا بھی ہے ، جلنا بھی

مگر مثلِ چراغ اپنے ہی بام و در میں رہنا ہے

لہو کی بوندیاں پلکوں کی شاخوں پر اُتر آئیں

یہ موسم جانے کب تک کوچۂ صر صر میں رہنا ہے

سفینے خواب کے کب بہتے پانی میں ٹھہرتے ہیں

سو اَب یہ کارواں بھی کُنجِ چشمِ تر میں رہنا ہے

عجب موسم ہے جس کے رنگ و خوشبو کی روایت کو

دھڑکنا مجھ میں ہے لیکن ترے پیکر میں رہنا ہے

ابھی آدابِ گریہ سے نہیں واقف ہوا خاور

ابھی اس خاک داں کو دستِ کوزہ گر میں رہنا ہے
...................................

طلوعِ ہجر کا منظر غبار کرنے کو

یہ مرحلہ بھی ہے ضبط اختیار کرنے کو

ہَوا کے ہاتھ میں ہے پرچمِ ستارئہ شام

کسی نگہ ، کسی رخ پر نثار کرنے کو

بنا دیے میرے رب نے یہ چشم و آئینہ

جو توُ نہیں تو ترا انتظار کرنے کو

وہ تو ہو یا تیری آہٹ کہ پھول کا کھلنا

ہمیں بہت ہے یہی بے قرار کرنے کو

ہوا گزرتے ہوئے لے گئی کہیں مرے خواب

کسی چراغِ محبت پہ وار کرنے کو

...............................

تجھے کس سمت جانا تھا

تجھے کس سمت جانا تھا

تجھے معلوم ہے!ہم نے بڑی منّت سے دل کو

بادہ و گل کی سلامی کے لیے راضی کیا تھا، کس قدر مشکل سے سینے کی اندھیری کوٹھڑی کو اک لہو کی بوند سے روشن کیا تھا چشمِ تر کے سامنے اس کوچۂ بے مہر کے منظر سجائے تھے

ردائے غم اُتاری اور تنِ خاکستری کو

رنگ و خوشبوئے تمنّا زار کا عادی کیا تھا

اے ہوائے بے ثمر

اس بار بھی تو چاک داماں لے کے کوئے جاں میں اُتری ہے

نہ تیرے پاؤں میں خوشبو کی جھانجر ہے

نہ ہاتھوں میں کوئی پھولوں کا گجرا ہے

نہ سر پر اَبر کی چادر

نہ لہجے میں کسی دلدار لہجے کی شباہت ہے

تجھے کس سمت جانا تھا

اور ایسا دامنِ صدچاک لے کر اس طرح

کیوں میرے خواب آباد کی جانب نکل آئی!

.......................

کن ہَواؤں میں رہے، کون نگر ٹھہرے ہیں

قافلے کیا سر آغازِ سفر ٹھہرے ہیں

جانے کب حجرئہ جاں میں تیری خوشبو اُترے

ابھی سینے میں ترے ہجر کے ڈر ٹھہرے ہیں

آن ٹھہرے سرِ دل پھر تیرے پیکر کے خطوط

مگر اس بار بہ اندازِ دگر ٹھہرے ہیں

جن کے ساحل تیرے آنچل نے کیے تھے آباد

وہ سمندر پسِ دیوارِ نظر ٹھہرے ہیں

جو بھی آتا ہے ترا نام پتا پوچھتا ہے

اسے صبا ہم تو تری راہ گزر ٹھہرے ہیں

دل اُسی کوئے ملامت کی تمنّا میں رہا

سایۂ دست صبا میں بھی اگر ٹھہرے ہیں

ماہ تاب اور تری یاد کے جگنو خاور

مدّتوں بعد یہ دونوں مرے گھر ٹھہرے ہیں
.................................

گھروں میں ایک گھر ایسا بھی تھا

گھروں میں ایک گھر ایسا بھی تھا جس میں

ہمیں تنہائی قطرہ قطرہ کرکے پی رہی تھی اور ہم بھی

لالٹینوں کی طرح جلتی ہوئی سوچوں میں راتیں کاٹتے تھے حبس اُگلتے، ہانپتے بام و در ودیوار جیسے دن اُٹھاتے تھے

کبھی اچھے دنوں کے خواب بن دستک دیے

دل میں درآتے تھے تو اپنی رت جلی آنکھوں پہ پلکیں اوڑھ لیتے تھے، ہَوا کی آہٹیں سن سن کے ڈرتے تھے

گلی کے موڑتک سینے کو بھاری کرنے والی خامشی کا بوجھ
 

 

مٹی سے اَٹے چہرے، درختوں سے الگ ہوجانے والی چھال جیسی آرزوئیں، دوپہر کی دھوپ جیسی چپ کی بکل
 

 مار کر بیٹھی ہوئی آنکھیں
 

یہی کچھ تھا
 

مگر دل اور نظر کو ایک سطرِ خواب نے ہم خوبنایا تھا
 

نہ جانے کس نے کس کو پہلے اپنے خواب کی تعبیر پایا تھا
 

ہمیں تو بس سبھی کچھ اپنا لگتاتھا
 

وہ تیری گفتگو کرتی ہوئی پلکیں
 

وہ تیرے ہاتھ کی پوروں میں اپنے نام کی سرخی
 

گلاب اوررات کی رانی کے گل دستے
 

سبھی کچھ اپنا لگتا تھا
 

اور ہم بھی اس کہانی کے جلومیں بہتے بہتے پھر تری آنکھوں تک آپہنچے
 

اوراس سے پہلے اتنی اچھی آنکھیں کس نے دیکھی تھیں[
 

تری شاموں سے اپنی صبحوں تک،پھولوں کی خوشبو تھی
 

اور ان کے درمیاں خوابوں کی دنیا تھی
 

اوراس دنیا میں بس تیری محبت کا زمانہ تھا
 

گزشتہ عمر کی گلیوں میں تنہا پھرنے والی مہر باں جاناں
 

زمانہ کب کسی کا ہو کے رہتا ہے
 

زمانہ ایک بنئے کی طرح چالاک ہے
 

ہونی کو انہونی میں، انہونی کو ہونی میں کچھ ایسے ہی بدلتا ہے
 

کہ جس کے دکھ میں آنکھوں کے بھرے ساون پیالے ٹوٹ جاتے ہیں
 

ہَواسوچوں میں گرہیں ڈال دے تو روح کے اندر
 

 اُترنے والے ساتھی چھوٹ جاتے ہیں
 

اور ایسے دکھ کی چھاؤں اوڑھ کر ہم نے

یہ کتنی بار سوچا ہے

گلی کے موڑ تک پھیلے ہوئے کچے زمانوں سے

تری آنکھوں میں کاجل کی طرح سجنے کی خواہش تک

ہمیں اک واہمے جیسی حقیقت

اور کچھ پھولوں کی خوشبو ہی بہت تھی

..............................

اک پھول کھلنا چاہتا ہے

روپ چھاؤں کی طرح

اک خواب مجھ کو نیند کے

پہرے میں ملنا چاہتا ہے

دھوپ چھاؤں کی طرح
..............

میری نظم اور میرے درمیان ایک اورنظم

اک صبح زرد کی بے ترتیبی

کچی نیند سے اُٹھ جانے اورخواب کٹورے سورج کی دہلیز پہ رکھ کر لوٹ آنے کی سوچ میں دن چڑھ آتا ہے

پھر دن کا پتھر شام کی چوٹی تک لانے کی ہمت باندھ کے
 

بستر سے اُٹھ جاتا ہوں اور دفتر جانے ،سارے ضروری اور ادھورے کام مکمل کرنے کی خواہش کو ناشتہ دان میں بھر کرگھر سے قدم باہر رکھتے ہی میں کہیں اور نکل جاتا
 

 ہوں راہ کہیں رہ جاتی ہے
 

اک دوپہروں کی دھوپ بھٹکتی بینائی
 

جوگلیوں کے سنّاٹوں میں، کہیں سڑکوں کے چوراہوں میں کہیں اینٹیں اوڑھے، چپ سادھے اور اپنے آپ میں دبکے ہوئے بد رنگ مکانوں میں، کسی انہونی کے لشکاروں
 

 سے چندھیاجاتی ہے
 

تب کالے رنگ کے لمحے سر سے پاؤں تک

اک انجانے خوف کی زنجیریں دل کو پہنا دیتے ہیں چلتے چلتے رَستہ آپ ہی آپ کہیں پر گم ہوجاتا ہے، پھر میں

 کہیں اور نکل جاتا ہوں، بات کہیں رہ جاتی ہے

کوئی شام ستاروں سے خالی

جسے چاروں سمتوں سے بڑھتی ہوئی تاریکی کے لشکرگھیر کے خیمۂ دل تک لے آتے ہیں نیزہ و خنجر، تیغ و سپر کی دہشت تیز ہَوا کی صورت چشم و چراغ بجھا دیتی ہے، تاریکی میں ہاتھ کو ہاتھ سجھائی نہیں دیتا اور اپنے آپ سے اتنا ڈر لگتا ہے، دھڑکن دل سے ٹوٹ کے قطرئہ خون میں یخ ہوجاتی ہے

 اس برفیلی تاریکی میں اک درد کی ڈور پروئی ہوئی

 لفظوں کی ڈار بکھر جاتی ہے، میں کہیں اور نکل جاتا ہوں

 سطر کہیں رہ جاتی ہے

دن رات کی دلدل میں دھنستی ہوئی تنہائی

مری نظم اور میرے بیچ بہت گہرائی تک کسی درد شجر سے

 پھوٹنے والی خوشبو راہ نہیں پاتی، مرے سینے کی محرابوں

 میں در آتی ہے

اک سانس آتی اک جاتی ہے

ان آتی جاتی سانسوں کو یہ خوشبو درد کے جھونکوں سے مہکاتی ہے

 پلکوں تک آجانے والی شبنم کے موتی چن چن کر

 اس تنہائی کو پہناتی ہے، کچی نیند جھروکوں سے پھر صبح زرد کا

 پتھر میرے سینے سے یوں ٹکراتا ہے

میں کہیں اور لڑھک جاتا ہوں

نظم کہیں رہ جاتی ہے

................................................

یہاں اک نظم رکھی تھی

ابھی کچھ دیر پہلے

صبح تازہ کی نسوں میں موبل آئل کا دھواں گھلنے سے کچھ پہلے

 یہاں اک نظم رکھی تھی

بہت سے بے سروپا خوابچوں

بے کار نیندوں، رت جگوں اور وسوسوں اور کارِ دنیا سے

 بھرے تکیے کے نیچے نظم رکھی تھی

گلِ رخ سارِجاناں پر مہکتے شبنمی قطروں کی صورت حرف تھے اس کے

جمالِ خود نِگر کے دودھیا رنگوں میں

ایک اک کرکے میں نے اس کے سارے لفظ گوندھے تھے

خرامِ دوست کے مانند اس کی ساری سطروں میں روانی تھی

لبِنم آشنا کی طرح تیکھا اور رسیلا اس کا لہجہ اور ہر مصرع نزاکت میں

 مثالِ گردنِ مینا

نگاہِ ساقی سیمیں بدن جیسے اشارے، زاویے،دلداریوں کی اوٹ میں بے مہر یوں کی سوختہ سامانیاں ،جو کچھ

دلِ عشاق کو کھڑکی سے ملتا ہے سبھی کچھ اس میں تھا

اک آتشِ کم رَو تھی

جس کی آنچ پر میں نے بہت دن بعد اپنی دھڑکنیں پکنے کو رکھی تھیں

عجب جادوگری ہے کارِ دنیا بھی

کوئی لمحہ فراغت کا نہیں ملتا

گزرتے وقت کے پہیّے سے اپنے پاؤں کا چکر ملانے کی

عبث خواہش میں جتنی دھول آنکھوں میں درآتی ہے

بھلا دیتی ہے کس کاغذ پر کتنی نظم لکھی تھی

 کہاں کس خواب کے ٹکڑے پڑے ہیں، کون سے کونے میں کس خواہش پہ مکڑی جال بنتی جارہی ہے، کون سی دیوار

 پر کس آئینے میں بے ضرورت عکس رکھا ہے

عجب جادوگری ہے کارِ دنیا بھی

کوئی لمحہ فراغت کا نہیں ملتا

بہت دن بعد چھٹی کا یہ دن بھی بس اسی الجھن میں گزرے گا

کہ میں جو نظم کمرے میں پڑے کاغذ کے ٹکڑوں اور سینے

کے خلا میں ڈھونڈتا ہوں، کیا خبر وہ نظم کس لمحے کے دامن کی گرہ میں باندھ کر اپنی لہو لہروں کی کن گہرائیوں میں

 پھینک بیٹھا ہوں

ابھی سر پر اُمڈتی، بھنبھناتی شام آجائے گی

ماہِ نو کے ماتھے سے سرک کر رات کا آنچل مری آنکھوں

 کے اوپر پھیل جائے گا

اسی حالت میں بیٹھے بیٹھے

اگلی صبح تازہ کی نسوں میں موبل آئل کا دھواں گھلنے لگے گا

سارا منظر ہی بدل جائے گااورمیں اپنی اس اک نظم کو پھربے سروپا خوابچوں،بے کار نیندوں، رت جگوں میں وسوسوں اور کارِ دنیا سے بھرے تکیے کے نیچے دستِبے مایہ

 سے دیکھوں گا

درودِیوارِ جاں سے لگ کے بیٹھی زرد تنہائی سے پوچھوں گا

 کہیں تم نے نہ دیکھی ہو ۔ ۔ ۔ یہاں اک نظم رکھی تھی!
.........................

کچھ خواب جو نیند کی جان دکھائی دیے

ٹوٹے تو تری پہچان دکھائی دیے

جل تھل تھی لہو سے گلاب نظر سرِ شام

جب دھول چھٹی تو مکان دکھائی دیے
 

اے حرفِ دعا! مرے سچّے حرفِ دعا

کیوں اجر کے دن سنسان دکھائی دیے

موسم بدلا تو ہَواؤں کے ہاتھ میں بھی

جو پھول تھے تیر کمان دکھائی دیے

جو میرے لیے سب کچھ تھے وہی اک دن

بے آب و گیہہ میدان دکھائی دیے

یہ اس کی نظر کا کمال تھا یا کوئی وہم

سپنے تتلی کی اُڑان دکھائی دیے

تھک ہار کے جب دریا اُترے تو وہاں

اک شہرِ وفا کے نشان دکھائی دیے

جب نہرِ فرات کو ہوش آیا تو اُسے

نیزوں پہ چڑھے قرآن دکھائی دیے

خاور اب کس سے کہوں کہ مجھے اک روز

اُس آنکھ میں دونوں جہان دکھائی دیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

گھر سے نکلے، تری راہ گزر کے ہوئے

ہم لوگ تو بس اِسی ایک سفر کے ہوئے

پھر اپنی خاک بھی شہرِ ہَوا کی ہوئی

جب رنج مرے کسی دوسرے گھر کے ہوئے

یہ باغِ، بغیچے، رنگ محل اُس کے

صحرا و سراب اِس دیدئہ تر کے ہوئے

اک چھاؤں نے میری نیند سے خواب چنے

وہ خواب بھی پھر اُسی چھاؤں، شجر کے ہوئے

پہلے پتواریں ٹوٹ گریں سرِ آب

پھر لشکرِ جاں کے علم بھی بھنور کے ہوئے

پاتال کے اندر بھی ہیں سو پاتال

یہ راز تو وا پانی میں اُتر کے ہوئے

تم اپنی ذات میں شرمندہ ہو تو کیا

رسوا ہم بھی تو محبت کر کے ہوئے

اب اُن کا سمٹنا سہل نہیں خاور!

وہ رنگ کہ جو تصویر بکھر کے ہوئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مداواہو نہیں سکتا

مداواہو نہیں سکتا

دلِ سادہ

اب اُس آتش نما کے سامنے عجزِ محبت کا اِعادہ ہو نہیں سکتا

یہ کیا کم ہے

کہ اپنے آپ تک کو بھول کر

اُس حسنِ خود آگاہ کی خاطر نہ جانے کتنے روز وشب تھے

 جو ہم نے گنوائے تھے

بہت سارے دنوں کی گٹھڑیاں تھیں

جن کو کھولا تک نہ تھا ہم نے

بس اک تہہ خانۂ عمرِ گزشتہ میں

ہم ان سب گٹھڑیوں کو ڈھیر کرتے جارہے تھے، اُن گھنی پلکوں کی ٹھنڈی چھاؤں کو محسوس کرنے کی تمنّا میں ہمیں یہ دھیان کب تھا، کون سی گٹھڑی میں کتنا خوب صورت دن بندھا ہے اور اُس بے دام دن کی صبح ساحر کس ہَوا کے تخت سے اُتری ہے، کن پھولوں کی خوشبو زیب ِتن کرکے

 سوادِ شب سے جھانکی ہے

لب و رخ سار کو قوسِ قزح کے رنگ دینے کی

عبث خواہش میں ہم کو دھیان کب تھا، کون سی گٹھڑی میں کس دن کی دوپہر اپنے طلسم آثار رازوں کو سنہری دھوپ

 کے تھل میں جگاتی ہے

چھتوں پر سوکھتی مرچوں

گلی میں گونجتی، اسرار میں ڈوبی ہوئی سی خامشی میں

کون سے لمحے سلگتے ہیں

ہمیں یہ دھیان کب تھا

اُس تمنّا زار کے پیراہنِ صدر رنگ کے اندر مہکتی گرم خوشبو کے خرامِ تازہ میں کھوئے ہوؤں کو دھیان کب تھا

 کون سے دن کی سہانی شام کنِ اُفقوں کو روتی ہے

بہت سارے دکھوں کے درمیاں

جو ایک شمعِ آرزو تھی، اس کی لَو کے سامنے جھک کر ہم اُس بے مہر چشمِ منحرف میں بس ذرا سی دیر کو اک حرف کی تعبیر پڑھنا چاہتے تھے اور خمیرِ عشق میں گوندھے ہوئے اک خواب کا اظہار کرنا چاہتے تھے اور اس ساری کہانی میں ہمیں یہ دھیان کب تھا، کون سی گٹھڑی میں کس دن کا

 جنازہ ہے

ابھی تہہ خانۂ عمرِ گزشتہ کا یہ دروازہ کھلا

تو دھیان آیا ہے کہ اتنی ڈھیر ساری عمر مٹّی میں ملا کر جو

 خساراہاتھ آیا ہے، دوبارہ ہو نہیں سکتا

مداوا ہو نہیں سکتا

دلِ سادہ

اب اُس آتش نما کے سامنے عجزِ محبت کا اِعادہ ہو نہیں سکتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طاہرہ نقوی کے لیے ایک نظم

تہہِ خاک ہے

کوئی خواب موسمِ سبز میں تہہ خاک ہے

نگہ ء ملال کے رُوبرو کسی شاخِ تازہ سے ٹوٹ کر کوئی

 گل نما سرِ خاک ہے

کوئی نبض، ڈوبتے منظروں میں چراغِ ہجر کی ڈولتی ہوئی روشنی میں غبارہے

 تہہ خاک ہے

وہ جورسم رسمِ فراق ہے فقط ایک منظر خاک ہے

کوئی چشم اپنے طلسم زار میں کیسے کیسے صبا مثال

کمال کاڑھ کے سو گئی

یہ کمال کیا ہیں، سِفالِ جاں کے خمیر میں

کسی آتشِ گل سرخ رُو کے یہ زاویے ہیں ،مثالیے ہیں گنوا دیے ہیں، دل و نگاہ کے منظروں نے گنوا دیے وہ

 مثالیے مگر ایک یہ رُخِ خاک ہے
 

رُخِ خاک آئینۂ زوالِ جمالِ فن پہ اداس ہے

یہ جو تعزیت کے دیے لبوں میں سلگ رہے ہیں

زباں جو فاتحہ خواں ہوئی ہے، دماغ جو تری رخصتی پہ کمالِ غم میں دھواں ہوئے ہیں تری طرح یہ بھی سب کا سب

 زرِ خاک ہے

یہ جو علم و فن کا عروج چھونے کی خواہشوں
 

میں بھٹک رہا ہے، یہ آدمی

 جو سنے تو قصۂ خاک ہے

 جو گرے تو سینۂ خاک ہے

 جواڑے تو صرصرِ خاک ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کون اُترے گا لحد میں میرے شاعر کے لیے

فیض صاحب کے لیے

ان گنت خاک نشیں، خاک بسر،خاک ثمر

ایک عشاق کا مجمع ہے کہ جو

نشۂ غم میں نڈھال

بہکے بہکے ہوئے قدموں سے جنازے کی طرف جاتا ہے

ہونٹ مصروفِ عزاداری مہتابِ سخن
 

اور سرِدیدہ و دل
 

ایک تسبیح الم جاری ہے
 

حلقۂ بام سے اک درد کی جھنکاراٹھی
 

پرچمِ شعر و سخن میں جسدِفیض کی تکفین کرو
 

زیر سرعشق کا آئین رکھو
 

عدم آبادکی ڈوری سے سفر گردانگوٹھوں کی کہانی باندھو
 

ربِّکعبہ کی طرف لوٹنے والوں کی نشانی باندھو
 

 

شانۂ صبر پہ اک عہدِمحبت کا عروج
 

اوراک قافلۂ دیدہ و دل
 

وارثانِ سخنِ فیض! کہو
 

دیدہ و دل سے کہو آہ وفغاں آہستہ
 

کہ علم دارِ محبت کو ابھی رزقِ زمیں ہونا ہے
 

کون اُترے گا لحد میں مرے شاعر کے لیے
 

جو بھی اُترے اُسے کہہ دو
 

اُسے کہہ دو کہ نہیں، چشمِ نم ناک سے آنسو نہ ٹپکنے پائے
 

سخن فیض بہت نازک ہے
 

کوئی کنکر کسی پہلو بھی نہ چبھنے پائے
 

دیکھنا!حرف کی پوروں
 

میں کوئی زخم نہ لگنے پائے
 

اس کے لفظوں سے ابھی غازئہ فردانہ اُترنے پائے
 

شاخِ شانہ سے لحد میں گلِ تر کی صورت
 

میّت ِفیض رکھو

وارثانِ سخن فیض

ذرا آہستہ

صورتِحرف صبا آہستہ

بسترِ خاک میں ٹھنڈک ہے بہت

 اورذراآہستہ

..........................................

گریہ

فیض صاحب کے لیے

فیض صاحب!

یہ کیا کہ اپنے لیے

دمِ رخصت سرِدیارِلحد

اک عددان سِلی قبا کے سوا

آپ نے کچھ نہ انتخاب کیا

ہم بھی تھے
 

اورہماری آنکھیں بھی
 

آنسوؤں میں گندھی ہوئی آنکھیں
 

ہم بھی تھے
 

اورہماری سانسیں بھی
 

ہچکیوں سے بندھی ہوئی سانسیں
 

ہم بھی تھے
 

اور یہ لبِاظہار
 

لبِ اظہار پر کھلی سرسوں
 

ماتمی دل بھی اور اس دل کے
 

آئینہ خانۂ ملال میں تھے
 

کتنے موسم صفِچراغ میں تھے
 

مگر اک شمعِ تعزیت کے سوا
 

آپ نے کچھ نہ انتخاب کیا
 

اب جو یہ باقیات گریہ ہیں
 

کس کی آنکھیں بہم کریں گی اِنھیں!
 

کس کی پلکیں رقم کریں گی اِنھیں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زوالِ شب ہے، ستاروں کو گرد ہونا ہے
 

پسِ نگاہ ابھی ایک غم کو رونا ہے
I

اب اس کے بعد یہی کارِ عمر ہے کہ ہمیں
 

پلک پلک میں تری یاد کو پرونا ہے
 

یہی کہ سلسلۂ نارسائی ختم نہ ہو
 

سو جس کو پا نہ سکے ہم، اُسی کو کھونا ہے
 

جو لفظ کھل نہ سکیں آئینے پہ ، مٹّی ہیں
 

جو بات دل پہ اثر کر سکے وہ سونا ہے
 

توُ اس کو توڑنا چاہے تو توڑ سکتا ہے
 

کہ زندگی ترے ہاتھوں میں اک کھلونا ہے
 

بس ایک چشم سیہ بخت ہے اور اک تیرا خواب
 

یہ خواب، خواب نہیں اوڑھنا بچھونا ہے
 

سفر ہے دشت کا اور سر پہ رخت تنہائی
 

یہ بار بھی اِسی عمر رواں کو ڈھونا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہمیں تھے آبلہ پا، ہم ہی بزم آرا تھے
 

ترے فراق کی سب منزلوں میں تنہا تھے
 

گزر کے آئی ہیں جن مرحلوں سے یہ آنکھیں
 

وہ سب مقام ترے ہجر کا تماشا تھے
 

گلہ کریں بھی تو کس سے کہ توُ بھی جانتا ہے
 

اُتر گئے جو رگِ جاں میں، کیسے دریا تھے
 

بچھڑتے وقت یہ کیا ہو گیا تھا آنکھوں کو
 

کہ ہم تو تجھ سے فقط نام کے شناسا تھے
 

صدا بھی دے نہ سکے ڈوبتے ستاروں کو
 

ہزار رنج طبیعت میں کار فرما تھے
 

پھر اک مسافت گریہ کا سامنا تھا ہمیں
 

جلے چراغ تو پھر انجمن میں تنہا تھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کبھی خود میں، کبھی خوشبو کے رم میں ڈھونڈتے رہنا

یونہی آنکھوں ہی آنکھوں میں کسی کو سوچتے رہنا

کسی کی یاد کا اس موسمِ گل کی رفاقت میں

سرِ مژگاں ستارے کی طرح سے ڈولتے رہنا

اُترنا محملِ چشمِ فراق آثار سے اور پھر

بہ رنگِ قطرئہ شبنم لبِ گل چومتے رہنا

کنارِ آبجو موسم ہو تیرے سبز آنچل کا
 

اور اس موسم کی خواہش کا، دلوں میں گونجتے رہن
 

پھر ان آنکھوں کا کم آمیز ہونا بھی قیامت ہے

عجب اک زاویے سے آئینے کے سامنے رہنا

غزالِ دشتِ جاں! آخر تجھے ہم سے بچھڑنا ہے

مگر دل کی رگوں میں درد بن کر جاگتے رہنا

طلسمِ موجۂ گل کی طرح اُس کم نگاہی کا

رگِ جاں میں اُترنا، دل کی گرہیں کھولتے رہنا

متاعِ جاں بس اک خوشبو ہے اس کے نام کی خاور

اب اُس خوشبو کے پیچھے زندگی بھر بھاگتے رہنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہَوا کو اپنے لیے بادبان میں نے کیا
 

حدِ نظر سے پرے ، آسمان میں نے کیا
 

یہ سوچ کر کہ وہ بدنام ہو نہ جائے کہیں
 

کہا جو اُس نے، اُسی سے بیان میں نے کیا
 

وہ لختِ ماہِ منیر اب مجھی سے چھپتا ہے
 

جسے فراق کی نیندوں جوان میں نے کیا
 

اب اس سے کیا کہ بچھڑنے میں مصلحت کیا تھی

یقین اُس نے کیا، کچھ گمان میں نے کیا

بس ایک نام بچا تھا میانِ ہجر و وصال

مٹا مٹا کے جسے بے نشان میں نے کیا
 

گزر گہوں سے گزرنا محال تھا تیرا

پلک پلک کو ترا پاسبان میں نے کیا

دل و نگاہ کے منظر میں جو بھی دشت کھلا

ہر ایسے دشت کو آخر مکان میں نے کیا

تھکن نے پاؤں میں کانٹے بچھا دیے خاور

مگر یہ دھوپ سفر بے تکان میں نے کیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ابھی مجھ کو بہت سے کام کرنا ہیں

کسی نے میری پلکیں نوچ کر رسّی بنائی
 

اور پھر اُس رسّی میں میرے خواب باندھے اور پھر میرے
 

 ہی سینے کی اندھیری کوٹھڑی میں قید کرڈالے
 

اندھیرے میں سجھائی کچھ نہیں دیتا
 

بس اک لَو ہے لہو کی بوند کے مانند
 

جس کی ٹمٹماہٹ میں یہ سارے خواب سایوں کی طرح سینے کے محرابوں سے لپٹے منتظر ہیں جیسے کوئی آکے ان
 

 کے ہاتھ پاؤں کھول کر آزاد کردے گا
 

مگر مجھ کو بہت سے کام ہیں
 

خود اپنی بے پلکوں کی آنکھیں دیکھنے کی بھی مجھے فرصت نہیں ملتی
 

 مرے چاروں طرف دنیا ہے
 

دنیا کے ہزاروں کام ہیں اور میں اکیلا ہوں
 

اک ایسا حیرتی ہوں جس کی مٹھی سے گزرتی ساعتیں بھی
 

ریت کے ذرّوں کی صورت دانہ دانہ کرکے نکلی جارہی ہیں ہاتھ خالی ہورہا ہے اور ابھی مجھ کو بہت سے کام کرناہیں
 

ابھی اس شام کے ریوڑ کو صبح زرد کی کھیتی تک
 

اک بوڑھے گڈریے کی طرح سے ہانک کر لانا ہے، یہ بھی دیکھنا ہے میرے ریوڑ سے کوئی ننھا ستارہ ٹوٹ کر آفاق تک پھیلے ہوئے اندھے سفر کی دھول میں غائب نہ ہوجائے
 

ابھی مجھ کو بہت سے کام کرنا ہیں
 

کسی کے پاؤں کو مٹّی کے جوتوں سے چھڑانا ہے، کسی کے حلق میں بوئی گئی پچھلی رتوں کی پیاس فصلیں کاٹنی
 

ہیںاورکسی خاکستری تن پر کوئی پیراہن گل کھینچنا ہے
 

 اے اسیرانِ قفس! مجھ کو بہت سے کام کرنا ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جاگتی آنکھ کا خواب

ایک رستہ جسے کلیوں نے سردشت پرویا ہو ہماری خاطر

ہم کہیں دور سے آتے ہوں کسی خواب میں گم

ہاتھ میں ہاتھ لیے

سطحِ آئینہ پہ چلتی ہوئی خوشبو کی طرح

سبک انداز ہوا کی صورت

وادی گُل کی طرف بہتے ہوئے جاتے ہوں
 

مگر اے جانِ جہاں اس کے لیے
 

ہمیں گرد ابِ زمانہ سے نکل آنے کی فرصت بھی تو ہو
 

وقت کے دشت ِبلاخیز میں کلیوں کو چٹکنے کی اجازت بھی تو ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے ہوائے بے ثمر

یہ دیوارِ قفس،یہ بامِ گریہ اور یہ محرابِ تغافل ہے

اور ان کے درمیاں ہم ہیں

یہ وہ منظر ہے جس نے ہم اسیروں کی فراق آلودہ سانسوں کو

 خزاں کی زردرُت سے باندھ رکھا ہے

مگر ہم قیدیوں کو اس سے کیا ہے

اے ہوائے بے ثمر!جب تک ترے پہلو سے جوئے ہجر ٹپکے گی، یہ چشم و لب یونہی ساکت رہیں گے، دیکھنا یہ ہے کہ اب ان منجمد لمحوں کے پیچھے کوئے جاناں کی طرف کھلتی

 ہوئی کھڑکی میں کب برگِ تمنّا سانس لیتا ہے

کب اِس برفاب موسم میں، سرِ مینا،گلِ رخ سار کھلتا ہے

...........................................

ہواغبار،بھرا گھر بھی، میری آنکھیں بھی

بچھڑتے وقت کا منظر بھی، میری آنکھیں بھی

پسِ گمان کہیں ماہتاب اُترتے ہیں

اُتر گیا ہے سمندر بھی، میری آنکھیں بھی

اک ایسا ہجر سر رنگ و صوت ہے جس میں

سلگ رہا ہے گل تر بھی، میری آنکھیں بھی

بس ایک چپ کی مسافت نے کردیا ہے نڈھال

اک آئینے کا مقدر بھی، میری آنکھیں بھی

بجھا چراغِ تمنّا تو بجھ گئے خاور

تمھاری یاد کے منظر بھی، میری آنکھیں بھی

..................................

کن آوازوں کا سنّاٹا مجھ میں ہے

جو کچھ بھی ہے تجھ میں ہے یا مجھ میں ہے

تیری آنکھیں میری آنکھیں لگتی ہیں

سوچ رہا ہوں کون یہ تجھ سا مجھ میں ہے

اس کے در پر ہر موسم نے دستک دی

آخری دستک دینے والا مجھ میں ہے

دل کی مٹّی لہو بنا کر چھوڑے گا

یہ جو کانچ کا چلتا ٹکڑا مجھ میں ہے

جس دریا کا ایک کنارہ وہ آنکھیں

اُس دریا کا ایک کنارا مجھ میں ہے

کھلنا ہے وہ پھول ابھی اک کھڑکی میں

جس کو آخرکار مہکنا مجھ میں ہے

جن آنکھوں کی جھیلیں کنول کھلاتی ہیں

رنگ سنہرا ان جھیلوں کا مجھ میں ہے

.................................

جلیں چراغ تو ظاہر ہو شام کا ہونا

پسِ نگہ کسی ماہِ تمام کا ہونا

جمالِ آئینہ و گل میں کیا رکھا ہے مگر

صبا کے ساتھ کسی کے خرام کا ہونا

سمیٹ لے گی یہ جوئے رواں کی بے تابی

کنارِ آب کسی تشنہ کام کا ہونا

تمھاری یاد کا موسم ہے اور سرِ منظر

طلوعِ اشک اور اس کے دوام کا ہونا
بساطِ دشتِ نظر پر نموئے کشتِ گلاب

اور ایسی راہ میں، ایسے مقام کا ہونا

یہی نہیں کہ فقط آبلے ہوں پیروں میں

نظر میں شرط ہے اُس لالہ فام کا ہونا

زوالِ تخت حشم کا نقیب ہے خاور

شہنشی کے جلو میں غلام کا ہونا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پردے کے پیچھے کون ہے

1988 1977ایک سیاسی منظر نامہ

جنگلوں کی زرد شاخوں پر
خزاں کی نیند گہری ہورہی ہے

پرکٹے ننھے پرندے رینگتے ہیں

اورمٹّی میں ملے گیتوں کی خوشبو ڈھونڈتے ہیں، ان کے

 سارے آشیانے تنکا تنکا ہوگئے ہیں

بوڑھے شیر اَب شہر کی سڑکوں پہ،چوراہوں پہ

 دن بھردندناتے پھرتے ہیں اور رات کی چادر میں لپٹی خواب گاہوں میں مزے سے ہرنیوں کواپنی ٹانگوں میں

 دبوچے ہانپتے ہیں
اور ہاتھی دلدلی جھیلوں میں اپنے کردہ ناکردہ

گناہوں کی سیاہی دھوتے دھوتے بس گدھوں کی طرح

 اپنی بے حیا کالک پہ لوٹے جارہے ہیں

لومڑوں کے غول انگوروں کی بیلوں کے تصور سے نکل کر

گول میزوں پر سجے کھانوں کی خوشبو چاٹتے ہیں

آگ برساتی ہوئی آنکھوں میں چیتے
 

اک غلامانہ محبت کے دیے روشن کیے، دفتر کے دفترگھیر کر بیٹھے ہوئے ہیں اور کتے،خاکی کتے اُن کے پہرے پر

 ہمیشہ کی طرح چوکس کھڑے ہیں

شہر کی چورنگیوں پربھیڑیے اِک دوسرے کی خصلتوں سے آشنا
 

آنکھوں میں آنکھیں ڈال کربیٹھے ہوئے ہیں،منتظر ہیں کبکسی کی آنکھ جھپکے اورباقی سارے مل کر اس کی بوٹی
 

 بوٹی نوچ ڈالیں
 

پرَکٹے زخمی پرندوں کا ہجوم
 

لڑکھڑاتا اورگھسٹتا
 

شہر کی گلیوں میں یہ نعرہ لگاتا جارہا ہے
 

پردہ کھولو،پردہ کھولو
 

بندروں کو
 

 ڈگڈی کی تال پرنچوانے والا بولتا ہے
 

پردہ کھلنے میں ابھی کچھ دیر باقی ہے
 

وقت کے سوکھے شجر کی کھوہ میں ہُد ہُد اچانک پھڑپھڑاتے ہیں
 

ذرادیکھو کہ اِس پردے کے پیچھے کون ہے آخر؟
 

کون ہے؟
 

پردے کے پیچھے کون ہے؟
 

یہ کون دیکھے اورسمجھے گا کہ اس پردے کے پیچھے کیا ہے، سرکس کے پرانے شعبدہ بازوں نے پردے کو ابھی تک کیوں گرا رکھا ہے، گہری خامشی میں زندگی کے یک رخے دن اوڑھ کربیٹھے کروڑوں پرَکٹے زخمی پرندے کیوں ابھی تک سوگواروں کی طرح پردے کی جانب دیکھتے جاتے ہیں
 

 اِن کو کیا خبرپردے کے پیچھے بھی تو اک پردہ ہے
 

 اُس پردے کے پیچھے کون دیکھے گا
 

انھیں گر کچھ خبر ہے تو بس اتنی
 

شہر سے جنگل تک اک بے جسم سنّاٹا اندھیروں سے گزر کر بھی اندھیرے کی گھنی جھاڑی کے کانٹوں سے الجھ کر ہانپتا ہے اورمٹی میں ملے گیتوں کی خوشبو ڈھونڈتاہے جس کو اک دن سائرن اور سیٹیوں کا شور پہنا کر یہاں لایا گیا تھا

میرے مولا!

یہ وہ منظر ہے جسے اب تک صداقت سے کتابوں میں نہیں لکھا گیا ہے

صرف میری آنکھوں کے برتن میں گیارہ سال کے تاریک روزوشب کی دلدل اورپرندوں کے سنہری ،سبز گیتوں کو ملا کرپل بہ پل گھولا گیا اور پھریہ کیچڑ

شہر کے دیوارودَر کے ہرمسامِ جان پر لیپا گیا ہے۔

میرے موالا

بس۔ ۔ ۔

بس اِک بارش۔ ۔ ۔ ترے بھیجے ہوئے بادل کے ٹکڑوں سے

میں اپنی دلدلی آنکھوں کو دھونا چاہتا ہوں

میں اپنے عہد کی تاریخ پرجی بھر کے رونا چاہتا ہوں
پلکوں کی گرفت میں ایک آنسو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھولوں کا جہان جل رہا ہے

سائے میں مکان جل رہا ہے

پتّوں میں سلگ رہا ہے موسم

مولا! میرا دھیان جل رہا ہے

یہ دل ہے، چراغ ہے کہ توُ ہے

ہر آن گمان جل رہا ہے

ہونٹوں سے گریز کرنے والے!

ماتھے کا نشان جل رہا ہے

پلکوں کی گرفت میں تھا آنسو

اب تک میری جان جل رہا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدیجہ آیا کے لیے ایک نظم

سمندر سے زیادہ ساحلوں کے دکھ کسے معلوم ہیں

ہم تو مسافر ہیں، ہَوا اور بادباں کی دوستی نے سطحِ آبِ تلخ میں رستے بنائے اور پرندوں نے ہمیں ایسے جزیروں کی خبر دی جن کی مٹّی حرفِ وعدہ کی طرح مانوس ہے ایسے زمانوں سے جنھیں پھر محملِ چشم تمنّا سے اُترنے کی صعوبت
 سے گزرنا ہے

اگربھولے سے مڑکر سمتِ ساحل دیکھنے کی آرزوکرلیں

تو جانو،پانیوں پر پانیوں کی ایک اَن دیکھی سی دیوار اُٹھنے لگتی ہے،رواں عمروں کی بے مایہ تھکن ہر قطرئہ خوں میں سمندر کی طرح سے پھیلنے لگتی ہے، گردابِ نظر میں موت اور پھولوں کے گل دستے، چراغِ تعزیت کی لَو میں روشن

 ہونے لگتے ہیں

مگر اے دل کسے معلوم ہے، ہم جس سمندر میں

سفر کرتے ہیں، اس کی تند لہروں میں ہماری اور تمھاری

 خاکناؤںسے پرے پھر اک سمندر ہے

........................................

موسمِ گل کے نام موجِ صبا

ڈھونڈ عمر دوام موجِ صبا

تیرے چہرے کے لمس کا جادو

ہوگئی لالہ فام موجِ صبا

گھل گیا خوشبوؤں میں صبح کا نور

جب ہوئی بے نیام موجِ صبا

تری سرمستیوں پہ قائم ہے

پھول بن کا نظام موجِ صبا

لے گئی مجھ سے عمر کی صورت

سایۂ گُل کے دام موجِ صبا

برف میں کھل اُٹھے ہیں سرخ گلاب

رت بدلنے کا نام موجِ صبا

شاعر آنکھوں کے واسطے خاور

صبح شبنم ہے ، شام موجِ صبا

......................................

چراغ کس کے لیے، آئینہ ہے کس کے لیے

سِفالِ جاں میں یہ عکسِ وفا ہے کس کے لیے

سلگ رہا ہے سر چشم کس بلا کا فراق

مشامِ جاں میں یہ محشر بپا ہے کس کے لیے
 

یہ رت جگوں کی مسافت، یہ گردِ کوئے ملال

اِس انجمن میں یہ حرفِ وفا ہے کس کے لیے

خزاں کی زرد ہَوا میں خیالِ موسم گل

مگر یہ سایۂ دستِ صبا ہے کس کے لیے
نہ کوئی رنگ ، نہ خوشبو ، نہ ابر اور نہ ایاغ

کھلا ہوا درِ وحشت سرا ہے کس کے لیے

یہ کس کے قامت و رفتار کے اسیر ہوئے!

قبول تجھ کو شکست اَنا ہے کس کے لیے

بس ایک لمحۂ حیرت میں رک گیا تھا کوئی

تمام عمر کوئی کب رُکا ہے، کس کے لیے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پسِ خیال جو تھا حرفِ بے نوا کی طرح

لپٹ گیا میرے ہونٹوں سے اک دعا کی طرح

جدائیوں کے تسلسل میں وصل کا لمحہ

طلوع ہونے لگا عرصۂ جزا کی طرح

مجھے وہ ہجر تو دے جس میں توُ دکھائی نہ دے

یہ کیا کہ آنکھ سے اوجھل ہوا خدا کی طرح

ترا جمال ، کھلے پانیوں پہ صورتِ ماہ

ترا خیال کلیسا میں راہبہ کی طرح

وہی ہیں موسمِ عمرِ رواں کے رنگ ابھی

تری جفا کی طرح اور مری وفا کی طرح
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

جب اپنے اور اس کے درمیاں فاصلے کو دیکھا

اسیر رنگ ملال ، ہر آئینے کو دیکھا

پلٹ پلٹ کر تری نگاہِ مفارقت نے

خبر نہیں مجھ کو یا مرے حوصلے کو دیکھا

طلوعِ فرقت کے باب باتوں میں کھل رہے تھے

تڑپ کے اس نے مجھے، ہَوا نے دیے کو دیکھا

سفالِ جاں پر دکھوں کے ساون اُتر رہے تھے

یہ کیسی رِم جھم میں ہم نے ایک دوسرے کو دیکھا

پلک پلک پر ہزار جگنو چمک اُٹھے تھے

نظر اُٹھا کر جب اس نے اک ثانئے کو دیکھا

نکل کر اپنے لہو کے دریا سے آخرِ شب

چراغِ محرابِ چشم نے راستے کو دیکھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

علامہ اقبال کے لیے ایک نظم

ترے دیکھے ہوئے اک خواب کی قوسیں نہیں کھلتیں

یہ مٹّی اور اس مٹّی کی خوشبو

جاگتے سوتے کسی شوریدہ سر کے راستے میں چپ کھڑی

 ہے ،ہاں مگر شوریدہ سر آنکھیں نہیں کھلتیں

ترے دیکھے ہوئے اک خواب کی قوسیں نہیں کھلتیں

کبھی گردِ سفر میں پاؤں باندھے

ناتواں ہاتھوں کو پھیلائے کسی دہلیز پر جھکتے، کسی دہلیز پر کشکولِ جاں کو توڑتے ہیں، چھلنیوں میں پانی بھرنے کی روایت کی طرح اپنے دریدہ دامنوں میں تیری سوچوں کے مہکتے پھول بھرنے کی تمنّا اب بھی ہے لیکن ہماری ناتواں پوروں سے اس صدیق موسم زار کی بانہیں نہیں کھلتیں

ترے دیکھے ہوئے اک خواب کی قوسیں نہیں کھلتیں

ابھی سینے مقفل ہیں

خمارِ شب میں چشم و لب کے آئینوں پہ کہرا سو رہا ہے، صبح صادق ہے مگر اس منجمد موسم میں کلیاں ہیں کہ پھر دستِ صبا کے لمس کو ترسی ہوئی ہیں، اے ہوائے مہرباں کی طرح موجِ گفتگو میں قریۂ آیندہ کی چوکھٹ پہ دستک دینے والے! ہم سے تو عصر رواں کی دھول میں ڈوبی ہوئی

 راہیں نہیں کھلتیں

ترے دیکھے ہوئے اک خواب کی قوسیں نہیں کھلتیں

ترے خوابِ تمنّا کی مہک کتنی اکیلی ہے

یہ دھرتی اور اس کی روح میں ممتا کی زرخیز ی وہی ہے

مذہب وملت کے سب رشتے وہی ہیں

پھر بھی موجِ گفتگو میںحرفِ راز آثارکہنے والے! یہ کیسی پہیلی ہے کہ دل میں پڑنے والے لفظ کی گرہیں نہیں کھلتیں،ترے دیکھے ہوئے اک خواب کی قوسیں نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

متاع چشم ہی کیا ہے بس ایک جوہر خواب

کھلا نہیں مگر اب تک مرے خدا، درِ خواب

جو عمر جاگتے رہنے کے رنج میں گزری

اُسی میں ڈھونڈتے رہنا تھا کوئی منظرِ خواب
 

صبا مثال کوئی چھو گیا تھا آنکھوں کو

پھر اُس کے بعد کوئی پھول تھا کہ تو سرِ خواب

کسی چراغ کی لَو ڈولتی رہی سرِ راہ

کسی مکان سے آتی رہی ہے صر صرِ خواب

سپردِ خاک کیا پہلے ہر تمنّا کو

پھر اُس کے بعد بچھا دی ہے اُن پہ چادرِ خواب

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سفر میں ساحلوں کے ساتھ بادبان کھو دیے

اُتر کے پانیوں میں سات آسمان کھو دیے

یہی کہ اِن نفس غبار ساعتوں کے درمیاں

ہَوا نے گیت، رہ گزر نے ساربان کھو دیے

بس ایک حرف کے گداز ہم پہ قرض تھے سو وہ

بچھڑتے وقت خامشی کے درمیان کھو دیے

فراق منزلوں پہ وہ غبار تھا کہ کیا کہیں

چراغ، شب نے اور ہم نے مہمان کھو دیے

رتوں میں ایک رت یہاں شجر بھی کاٹنے کی تھی

پتا چلا جب اپنے گھر کے پاسبان کھو دیے
بچا لیے تھے خواب جو مسافتوں کی دھوپ سے

وہ ابروباد موسموں کے درمیان کھو دیے

وہ نیند اپنے بچپنے کی راہ میں اُجڑ گئی
اس آنکھ نے بھی معجزوں کے سو جہان کھو دیے
سفر کی دھوپ اوڑھ کر تم آگئے تو ہو مگر
اب آئے ہو جب اِس گلی نے وہ مکان کھو دیے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تجھ بن تیری راہ سے گزرنا

آنسو کا نگاہ سے گزرنا

اک عمر کا روگ دے گیا ہے

دورِ شبِ ماہ سے گزرنا

پہلے تو نباہنے کی خواہش

پھر ایسے نباہ سے گزرنا

ہم جس سے گزر رہے ہیں اب تم

اس شہرِ تباہ سے گزرنا

انصاف سے فاتحِ سیاست

اس مسند جاہ سے گزرنا

ہم ہجر نژاد جانتے ہیں

راتوں کی اتھاہ سے گزرنا

مشکل تو نہیں تھا اتنا خاور

اس شخص کی چاہ سے گزرنا

..............................

رات اُتری، شام آثاروں کے بیچ

دشت میں، اِس دشت کے ماروں کے بیچ

اس قبیلے میں سبھی سردار ہیں

اور میں تنہاہوں دستاروں کے بیچ

حکمِ حاکم ہے کہ سچ بولے کوئی

آئینہ رکھتے ہیں بازاروں کے بیچ

اک زمانہ گوش بر آواز ہے

اک دیا روشن ہے بنجاروں کے بیچ

اک فراق آثار لمحے کی طرح

ایک چپ پھر آگئی یاروں کے بیچ

کوئی موسم لوٹ کر آیا نہیں

ماتمِ گل ہے عزاداروں کے بیچ

بادباں، دشمن ہوا کا ہاتھ ہیں
 

منزلیں زندہ ہیں پتواروں کے بیچ

...........................................

ہَوا کے سفر زار میں

یونہی ضبط کی ساعتوں میں

بکھرتے بکھرتے سمٹنے کی خواہش میں خوشبو بھرے

 سنگ ریزوں پہ چلتا رہوں گا

اگر کوئی پوچھے

مسافر!کہاں جائے گا

اور میں چپ رہوں

اور وہ اس گھنی چپ کی بے بس اُداسی کو

شب رنگ بالوں کی دوشیزگی میں سجائے چلا جائے

 مڑکر نہ دیکھے

کبھی یاد آؤں تووہ اپنے شوہر کی رہ

دیکھتے دیکھتے ان پہاڑوں پہ سوئی ہوئی برف میں اس گھنی چپ کی بے بس اداسی کی آواز سننے کی کوشش میں یہ بھول جائے کہ اب یہ مسافر ہَوا کے سفر زار میں ایک سائے

کی صورت بھٹکتا رہے گایونہی ضبط کی ساعتوں میں

 بکھرتا رہے گا
.........................................

یاد آنے لگے وہ خواب ہمیں

لے چلے پھر کہاں سراب ہمیں

پیاس چلنے لگی ہے آنکھوں میں

اب نہیں دیکھنے کی تاب ہمیں

تجھ سے بڑھ کر تری طلب کرنا

جھیلنا ہے یہی عذاب ہمیں

عمر بھر ایک یہ نہ جان سکے

آئینہ کر گیا خراب ہمیں

لکھنے پڑھنے میں جی نہیں لگتا

تیرا چہرا ہوا کتاب ہمیں

پاؤں منزل پہ رکھتے ہی خاور

یاد آیا وہ بے حساب ہمیں

...............................

جب بھی آنکھ سے آنسو ٹپکا

سارے شہر میں ہو گیا چرچا

دھندلی دھندلی تحریوں میں

دیکھ رہا ہوں تیرا چہرا

کل بھی تیری راہ تکے گا

آج بھی وا ہے دل دروازہ

تیرے دھیان میں چلتے چلتے

بھول نہ جاؤں گھر کا رستا

شام ہوئی اور دشت وفا میں

رہ گیا تنہا ایک ہیولا

رات گئے ٹھنڈی سڑکوں پر

پھرتا ہے اک پاگل جھونکا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آجائے نہ رات کشتیوں میں

پھینکو نہ چراغ پانیوںمیں

اک چادرِ غم بدن پہ لے کر

پھرتا ہوں شدید سردیوں میں

دھاگوں کی طرح الجھ گیا ہے

اک شخص مری برائیوں میں

اُس شخص سے یوں ملا ہوں جیسے

گر جائے ندی سمندروں میں

لوہار کی بھٹی ہے یہ دنیا

بندے ہیں عذاب کی رتوں میں

اب اُن کے سرے کہاں ملیں گے

توٹے ہیں جو خواب زلزلوں میں

موسم پہ زوال آرہا ہے

کھلتے تھے گلاب کھڑکیوں میں
اندر تو ہے راج رت جگوں کا
باہر کی فضا ہے آندھیوں میں
کہرا سا بھرا ہوا ہے خاور

آنکھوں کے اداس جھونپڑوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شام تنہا کبھی سحر تنہا

زندگی ہو گئی بسر تنہا

گن رہا ہوں فراق کے لمحے

شب کے سائے میں بیٹھ کر تنہا

کوئی کھڑکی کھلی نہیں ملتی

جیسے سب شہر کے ہوں گھر تنہا

اپنی محرومیوں کا ذکر نہ کر

خوشبوؤں کی طرح بکھر تنہا

کوئی آہٹ نہ کوئی سایہ ہے

مرے گھر کے ہیں بام و در تنہا

تجھ سے بچھڑے تو جسم و جاں کی طرح

ہو گیا سوچ کا نگر تنہا

یہ زمیں سائے کو ترستی ہے

جل بجھے دھوپ میں شجر تنہا

اس سے پہلے تو یوں نہ لگتا تھا

یہ مرا شہر اِس قدر تنہا

جلتے سورج کے سائے میں خاور

کٹ ہی جائے گا یہ سفر تنہا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عالمِ ہجر میں جو رات کٹی

آئینہ آئینہ تحریر ہوئی

ساحلوں سے تیری آواز سُنی

مجھ میں ہی طاقت پرواز نہ تھی

اُڑ گئے خواب پرندوں کی طرح

درد کی تیز ہَوا بھی تو چلی

پھر اُسی کوئے ملامت کو چلو
 

بھول بیٹھے ہو اگر گھر کی گلی

حسرتِ گردِ رہِ یار تھی چشم

ذرئہ جاں تھی سو مٹّی میں ملی

سایۂ منزلِ جاں سامنے تھا

پاؤں میں دھوپ کی زنجیر بھی تھی

وہ تری یاد کی پرچھائیں تھی

موت بن کر جو مرے دل پہ گری

تیرے آنے سے ذرا سا پہلے

آگئی سر پہ جو رخصت کی گھڑی!

دل جو مسمار ہوا ہے سو ہوا

یوں ہی ہونا تھا ، چلو یوں ہی سہی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صبا کے ہاتھ پر تحریر کرنا

ہمیں شرمندئہ تعبیر کرنا

کسی کے ہجر سے مانوس ہولے

پھر اُس کے وصل کو تسخیر کرنا

کبھی اِن رت جگوں کو جمع کرکے

اُسی خوشبو کا گھر تعمیر کرنا

ہمیں ایسا کوئی مشکل نہیں تھا

مگر اک خواب کو زنجیر کرنا

بچھڑنا اس قدر آساں ہوا ہے

تو پھر ملنے کی بھی تدبیر کرنا

کسی کم زور لمحے کی زباں سے

اب اپنے غم کی کیا تفسیر کرنا

تری آنکھوں سے سیکھا ہم نے خاور

ہَوا کو رنگ سے تعبیر کرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ذرا سوچو
یہ کیسی بے شباہت ساعتوں کی گفتگو ہے
اک طرف میں، اک طرف تم
بیچ میں اک برف کا ٹیلا

پھر اِس دوری کے منظر میں فراق آثار

لمحوں کی صدا کس برف کے ٹیلے سے

ٹکرا کر بکھرنے کی تمنّا میں بکھرتی ہے

اسے چھوڑو کہ یہ بے وجہ دوری
کس کی آنکھوں کی دُعا بن کر

تمھارے جسم و جاں میں برف کے مانند اُتری ہے

ابھی تو بس یہی سوچو

کہ اس بے وجہ دوری کے

اکیلے منظروں میں

کون، کس کو کس سے بڑھ کر یاد آتا ہے

 ذراسوچو

سوچوں میں لہو اُچھالتے ہیں

ہم اپنی تہوں میں جھانکتے ہیں

دنیا کی ہزار نعمتوں میں

ہم ایک تجھی کو جانتے ہیں

آنکھوں سے دکھوں کے رنگ آخر

سارس کی اُڑان اُڑ گئے ہیں

ساون کی طرح ہمیں بھگو کر

بادل کی طرح گزر گئے ہیں

یوں بھی ہے کہ پیار کے نشے میں

کچھ سوچ کے لوگ رو پڑے ہیں

وہ دکھ تو خوشی کے باب میں تھے

یہ دکھ جو طلوع ہو رہے ہیں!

جو کچھ بھی ہے دل کے آئینے میں

سب تیری نظر کے زاویے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بہتے ہوئے دو بدن سمندر

ہونٹوں کے کنارے آملے ہیں

کچھ بھی تو نہیں ہے پاس خاور

بس ایک اَنا ہے، رت جگے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کن رتوں کے سراب میں بھٹکیں

رت جگوں کی جلی ہوئی آنکھیں
ساعتیں لوٹ کر نہیں آتیں

یہ غنیمت ہے یاد تو آئیں

گھر مری بے نوائی سے بے کل

اور مجھے کاٹتی ہیں دیواریں

ایک دنیا ہماری چھاؤں تلے

اور ہم سائبان کو ترسیں

روزنوں سے در آئیں مہکاریں

پھول آنکھوں سے دور دور کھلیں

آؤ چپ کی زبان میں خاور

اتنی باتیں کریں کہ تھک جائیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

عذابِ ہجر سے میں کیا نکل گیا وہ بھی

چراغِ قُرب کی لَو سے پگھل گیا وہ بھی

رِدائے ابرِ جمالِ حجاب کیا سر کی

کہ انگ انگ ستاروں میں ڈھل گیا وہ بھی

دیارِ خواب میں اک شخص ہم قدم تھا مگر

پڑا جو وقت تو رَستہ بدل گیا وہ بھی

یہ اُس کی یاد کا اعجاز تھا کہ اب کے برس

جو وقت ہم پر کڑا تھا سو ٹل گیا وہ بھی

نہیں کہ صرف ہمیں راس آگئی دنیا

ہماری زد سے نکل کر سنبھل گیا وہ بھی

عجب طلسمِ نُمو تھا وفا کی مٹّی میں

ہوائے ہجر چلی، پھول پھل گیا وہ بھی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حصارِ جاں سے بصد اختیار گزرے گا

وہ پافگار بہ رنگِ غبار گزرے گا

دریچۂ نگہ بدگماں کو وا رکھنا

ابھی اِدھر سے کوئی جاں نثار گزرے گا

شکستہ پا سہی لیکن تری گلی سے کوئی

گزر سکا تو بہت شرم سار گزرے گا

ترے وصال کا نشہ، ترے فراق کا غم

طلسمِ آئینہ خانہ پہ بار گزرے گا

کسی کے ہجر میں دن کا بھی رات ہو جانا

وہ حادثہ ہے کہ جو بار بار گزرے گا

یہ دشت اور یہ گھر، خواب اور قریۂ خواب
کہاں کہاں سے مرا ہم دیار گزرے گا

زوال آئینۂ ذات کی صعوبت سے

جمال عکسِ رُخِ پرُ بہار گزرے گا

فقط خیال میں منزل کو چھوکے لوٹ آنا

اسے بھی میری طرح ناگوار گزرے گا

کسے خبر تھی کہ اس رہ گزارِ یاد سے وہ

مثالِ ماہِ شبِ انتظار گزرے گا

نشاطِ کوچۂ رنگِ بہار سے خاور

مری طرح کوئی دیوانہ وار گزرے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ڈانسنگ فلور

کس حدت شبنمی میں گم تھے

خوشبو تھی، طلسم تھا کہ تم تھے
 

اک رقصِ حیات تھا کہ ہم تھے

اور خنجر گل کی دھار پر تھے

سیّال تہوں کے اس سفر میں

تھے موم دو نیم خواب سارے

جلتے ہوئے جسم کے کنارے

ٹوٹے تو بدن تھکن میں تر تھے

بستر میں بھی فرشِ رقص پر تھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

واہمہ

خواب و خوشبو کا یہ موسم

دلِ بیمار کو راس آتا ہے
درد کا نور سرِ شام اُترتا ہے

جب آنکھوں میں تو پھر
ایسا لگتا ہے کہ تم جیسا کوئی
زینۂ شب سے اُتر کر مرے پاس آتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مشورہ 
کبھی تم بھی تنہا درختوں سے آباد
گونگی چٹانوں پہ سوئے ہوئے
 موسموں کی کہانی سنو!
ان آنکھوں سے بچھڑی ہوئی نیند اور خواب کی سرحدوں سے بہت دور
 گرتے ہوئے آب شاروں کی گہرائی میں ڈوب کر،کبھی منظروں کا اکیلا پن آنکھوں کی ویرانیوں میں سجاؤ
 جدائی کے سوکھے ہوئے زخم کھل جائیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مکالمہ

تم تو اپنی آنکیں چھپا کر نہ رکھا کرو

میرے ہونٹوں پہ کچھ اَن کہے لفظ ہیں

اِن کی سچائی کے نم سے جانِ جہاں

اپنی آنکھوں میں جلتے ہوئے

رت جگوں کو بجھایا کرو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نہ کوئی دن نہ کوئی رات انتظار کی ہے

کہ یہ جدائی بھروسے کی، اعتبار کی ہے

جو خاک اُڑی ہے مرے دکھ سمیٹ لیں گے اسے

جو بچھ گئی سرِ مژگاں، وہ رہ گزار کی ہے

یہ آرزو کہ کھلے انگلیوں پہ عکسِ جمال

اِس آرزو میں کہیں بات اختیار کی ہے

اُسی کا نام ہے وحشت سرائے جاں کا چراغ

اور اس چراغ میں لَو کس دلِ فگار کی ہے!

وہ کون تھا جو سرِ بام آ کے لوٹ گیا

یہ کس کا رقص ہے، گردش یہ کس غبار کی ہے

یہ کون مجھ میں ہرے موسموں کے ساتھ آیا

یہ کس کے رنگ ہیں، خوشبو یہ کس دیار کی ہے

جلانے والے نے خاور بجھا دیے ہیں چراغ
یہی قیام کی ساعت، یہی فرار کی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کھڑکی ہے نہ بام ہے نہ در ہے

خاور کیا یہ تمھارا گھر ہے

آنکھوں سے طلوع ہونے والی

خوشبو کی اُڑان بے خبر ہے

یہ ہجر و وصال کی کہانی

ٹوٹی ہوئی شاخ کا ثمر ہے

سورج سے کہو کہ ڈوب جائے

یہ عمر تو خواب کا سفر ہے

پلکوں پہ رکا ہوا تحیر

طوفانِ الم کا نامہ بر ہے

چاہو تو لپٹ کے رولو مجھ سے

رخصت کا سماں عروج پر ہے

خود اپنا شکار ہو رہا ہوں

سایہ سا کوئی مچان پر ہے

خود اپنی ہی خاک کو اُڑانا

سیکھو تو کمال کا ہنر ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صبح سے پہلے ملا شام نگر ، کس سے کہیں

جاگتے دن میں وہی رات کا ڈر ، کس سے کہیں

آندھیوں نے وہ سزا دی ہے کہ جی جانتا ہے

آشیانوں میں رہے بال نہ پرَ ، کس سے کہیں

کن دریچوں میں سجا آئے ہم اپنی آنکھیں!

اس گلی میں تو نہ دیوار نہ در ، کس سے کہیں

شہر کے سارے گلی کوچے ہمیں بھول گئے

لے گئی ہجر کی شب ، کون نگر ، کس سے کہیں

موجۂ رنگِ صبا ڈھونڈ رہی ہے کس کو
پڑ گئے کیوں یہ نگاہوں میں بھنور ، کس سے کہیں
اس کی آنکھیں میری آنکھوں میں مجھے کیسی لگیں
دل تو کہنے کو بہت چاہے مگر ،کس سے کہیں

اس خرابے میں بجز حرفِ نفس کچھ بھی نہیں

اور جو تھا آئینۂ جاں سے اُدھر ، کس سے کہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہجر کا موسم ہے، عمرِ رائگاں اور ایک میں

ایک صحرائے زمین و آسماں اور ایک میں

وہ بچھڑتے وقت آنکھوں میں سمندر بھر گیا

اب سرِ منظر فقط اک بادباں اور ایک میں

زندگی جیسے کمینے دوستوں کے درمیاں

اک مری تنہائی اک پندارِ جاں اور ایک میں

اُس نظرمیں کھلنے والے سارے موسم مجھ میں تھے

اب وہی موسم ہیں ، یادِ رفتگاں اور ایک میں

جیسے کوئی پھر اچانک لوٹ کر آجائے گا

منتظر ہے عرصۂ کون ومکاں اور ایک میں
گھر کے اندر کون ایسی چاند راتوں میں رہا
ہاں مگر اک ساعت وہم و گماں اور ایک میں

خاور اتنا ہی بہت ہے اس کہانی کے لیے

اک مری پلکوں کا جلتا سائباں اور ایک میں

...........................................

آئینے میں عکس ڈھل رہا ہے
 

پانی میں چراغ جل رہا ہے

آنکھوں میں غبار منزلوں کا

قدموں میں سراب چل رہا ہے

ہم اس کے مزاج آشنا ہیں

جو بات کا رخ بدل رہا ہے

اے لذت ہجر یاد رکھنا

یہ لمحۂ وصل کھل رہا ہے

اک تم کہ ہو بے خبر سدا کے

موسم ہے کہ ہاتھ مل رہا ہے

خاور کوئی یاد آگیا کیا!

سینے میں یہ کیا پگھل رہا ہے!
........................................

وہی ہے آنکھوں میں خواب رنگِ ملال جیسا

دلوں میں دوری کا تار، شیشے میں بال جیسا

رکی ہوئی آہٹوں سے آگے وہی زمانہ

کھلے ہوئے پھول کی مہکتی مثال جیسا

بہت ہی پیارا تھا اس کا انکار بھی کہ اب تک

نشہ ہے ان خام ساعتوں کا وصال جیسا

مگر وہ عمروں کے عہد جن کی نشانیوں میں

ہر ایک لمحہ ہے ایک ہی ماہ و سال جیسا

اسے پکاروں تو شہرِ پر ہول کی طرف سے

جو اَب اثبات میں ہو لہجہ سوال جیسا

بہت پرانی رتوں کا غم پھر دیے جلائے

ملے کہیں جب کوئی ترے خدوخال جیسا

اتار میرے لہو میں سچائیوں کا صحرا

کھلا گلاب اس میں پھر محمد کی آل جیسا
وہ میں تھا یا آئینے میں خاور کی کرچیاں تھی
چمک کے گزرا تھا ایک سایہ کدال جیسا!

....................................

کوئی نہ دیکھے گونج ہَوا کی

نگراں ہے اک ذات خدا کی

کھو گئیں چھوٹی چھوٹی اُڑانیں
 

پھیلتے شہروں میں، چڑیا کی
 

جتنے صحرا، وہ سب میرے
 

سونا ہے مٹّی دنیا کی
 

پہلے اپنی تہہ کو پالے

دیکھ روانی پھر دریا کی

میں نے ان آنکھوں کی خاطر

پھولوں جیسی اک دُعا کی ہے

اُن پتھریلی آنکھوں میں ہے

اک چپ چپ تصویر وفا کی

ذات سفر کے لمبے رستے

آبلہ پائی مجھ تنہا کی

دروازے کی اوٹ سے جھانکے

یاد تمھاری، شکل صبا کی

غم اندر کا نم ہے خاور

باہر آنچ ہے تیز ہَوا کی

...........................

وہ خوش رُو جب نہیں ہوگا تو یہ سب کون دیکھے گا

ہمارے دل پہ جو گزرے گی یا رب! کون دیکھے گا

بجھی جاتی ہیں شمعیں درد کی آہستہ آہستہ

کسی کے روٹھنے کا یہ نیا ڈھب کون دیکھے گا

اُجڑتا جارہا ہے موسمِ دل کا ہر اک منظر

اب اِس دل کی طرف کیا جانئے، کب، کون دیکھے گا

پرائے غم کی چوکھٹ سے لگی بیٹھی ہے تنہائی

سو اس کے نیم رُخ پر غازئہ شب کون دیکھے گا

نمودِ صبح کا اعلان تو کر جائے گا تارہ

مگر اک عمرِ کم آثار کی چھب کون دیکھے گا

بکھرتا جارہا ہوں آئینہ در آئینہ خاور

مگر کس کے لیے، یہ زاویے اب کون دیکھے گا

....................................

گئے زمانوں کی رہ گزر کون دیکھتا ہے

ہَوا میں بستے ہوئے نگر کون دیکھتا ہے

اُتر گیا کون موجۂ خوں میں، کون جانے

یہ کس کی آہٹ تھی بام پر، کون دیکھتا ہے

وہ مجھ سے بڑھ کر ہے میرا دشمن مجھے خبر ہے

اسی کا سایہ ہوں میں، مگر کون دیکھتا ہے

عذاب میری سماعتوں میں اُتر رہے ہیں

صدائے بے رنگ کا اثر، کون دیکھتا ہے

عجب ہوائے جرس کا پھیلاؤ ہے زمانہ

مرے چلن کی کسے خبر، کون دیکھتا ہے

.....................................

وہی وصل و ہجر کا سلسلہ ہے نگاہ میں

کسی خوابِ تلخ کا ذائقہ ہے نگاہ میں

کوئی نیند اپنے زوال میں ہے ستارہ جو

کوئی پھول یاد کا کھل رہا ہے نگاہ میں

کوئی آسماں کہ سرابِ حدِّ نظر ہوا

کوئی فرشِ خاک کہ آئینہ ہے نگاہ میں

کوئی رنگ میرے طلسمِ ذات میں قید ہے

کسی زرد رُت کا بہاریہ ہے نگاہ میں

کسی سبز دن کی ہَوائے تازہ کے سامنے

کسی شامِ غم کو چھپا لیا ہے نگاہ میں

کوئی نیم رخ مرے آئینے کے ہے رُوبرُو

کسی خامشی کا مثالیہ ہے نگاہ میں

ترے لوگ تجھ سے بچھڑ کے بھی نہ بھٹک سکے

وہی منزلیں، وہی راستا ہے نگاہ میں

حسب نسب خاک ہورہے ہیں

وہی تماشا ئے آب و گلِ ہے

وہی شب و روز کے تسلسل کا جبر ہے، آنکھ منظروں سے پناہ مانگے جو عرصۂ انجماد میں ہے وہ دل بھی اب دھڑکنوں

 کے مانند کوئی سچا گواہ مانگے
 

حبیب رب عظیم! میرے گلاب موسم کی برف باری نے ڈس لیے ہیں
 

نگاہ حدِّنگاہ تک اک ٹھٹھرتے سیال واہمے سے الجھ رہی ہے
 

مری سماعت کے گہرے پاتال میں
 

صداؤں کا قحط اپنے عروج پر ہے
 

نہ میرے ہاتھوں میں کوئی حرفِ دعا، نہ ہونٹوں میں تھرتھراہٹ
 

زبان صحرائے جاں میں پیاسے ببول کی طرح ایک
 

پیوند حلق ہے اور مرے سیاق وسباق کے سلسلوں کی جانب اَنا کی دیمک قدم قدم بڑھ رہی ہے، سارے
 

 حسب نسب خاک ہورہے ہیں
 

یہ کیسا منظر ہے، میرے اندر یہ کون سی رزم گاہ کے
 

 در کھلے ہوئے ہیں
 

ہَوا میں زہریلی سوئیاں ناچنے لگی ہیں
 

اندھیرا پلکوں پر اپنے لشکر اُتارتا ہے، صدائیں الفاظ کے ٹھٹھرتے ہوئے وجودوں سے زخم کھا کر بکھرتی جاتی ہیں
 

 وقت پرواز کررہا ہے
 

یہ کیسا منظر ہے راستے کی نشانیاں برف میں چھپی ہیں
 

مگر مرے ان نڈھال تلووں میں آگ کے
 

 پھول کھل رہے ہیں
 

حبیب رب عظیم! مجھ کو خبر نہیں ہے
 

سفر صعوبت کا ہو تو پیروں کی خاک موجِ فرات بن کر ہمیشہ ناقے کو تھام لیتی ہے، رکنا پڑتا ہے، اپنے لختِجگر کو دشمن کی زد میں لے آنے والی بے رحم ساعتوں سے گزرنا
 

 پڑتا ہے اور میں تو ابھی تک آغازِ صبح میں ہوں
 

حبیب رب عظیم! یہ دن،ہر ایک دن جیسا
 

ایک یہ دن، یہ عرصۂ انجماد، جس نے مری رگوں سے
 

 مرے لہو کو نچوڑ ڈالا، یہ عرصۂ انجماد کیا ہے؟
 

گزر گہہِ وقت کے کنارے
 

گرہ ڈلی پتلیوں سے مجھ کو جو دیکھنا ہے وہ میری تقدیر میں ہے لیکن ہر ایک دن جیسا ایک یہ دن، یہ عرصۂ انجماد جیسا مرا زمانہ مجھے یہ کس کربلا کی جانب گرا رہا ہے، میں بے خبر ہوں
 

حبیب رب عظیم! مجھ کو خبر نہیں ہے
 

میں عجز آمیز حوصلے سے یہ کہہ رہا ہوں میں بے خبر ہوں میں بے خبر ہوں کہ ایسی برفاب ساعتوں میں اگر کوئی غم اُمڈ کے آئے، تو حوصلے کی کمان میں تیر کیسے سجتے ہیں مجھ کو
 

 اس کی خبر نہیں ہے
 

میں جس تماشائے آب و گل سے گزر رہا ہوں
 

وہ عرصۂ انجماد میں ہے
 

یہ عرصۂ انجمادجس میں دلوں کی دھڑکن بھی بے صدا ہے
 

حبیب رب عظیم!
 

مجھ کوخبر نہیں
 

یہ قیام کیا ہے رکوع کیا ہے سجود کیا ہے

سجود کی منزلوں سے آگے وجود کیا ہے

مرے معطل حواس کے روبرو خلا ہے

خلا نے میرا وجود بے وزن کردیا ہے

حبیب رب عظیم

اذنِ طلب مجھے دے
 

نہ میرے ہاتھوں میں کوئی حرفِ دعا
 

نہ ہونٹوں میں تھرتھراہٹ
 

زبان صحرائے جاں میں
 

پیاسے ببول کی طرح ایک پیوندِحلق ہے
 

اور سانس برفاب ساعتوں سے الجھ رہی ہے

حبیب رب عظیم

مجھ کو خبر نہیں ہے

کہ میرے اندر کی رزمگاہوں میں اب تلک جتنے رن پڑے ہیں

میں ان میں سچائی کی طرف تھا

کہ سچ مرے جھوٹ کے نشانے کی زد پہ تھا ،میری خامشی کیا منافقت کا سکوت ہے، عجزِ محض ہے یا میں اپنے مرکز

 سے ٹوٹ کر ختم ہوچکا ہوں

اندھیرا پلکوں کی سیڑھیوں سے اُتر کے سینے میں چل رہا ہے
 

یقین کی حالتوں سے وہم وگماں کا ریشم لپٹ گیا ہے

صفا ومروہ کی چوٹیوں کو ثنائے رب عظیم کرنا سکھانے والے

میں بے ہنر ہوں، مجھے ہنر دے

میں تیرے درپر گداگروں کی طویل صف میں کھڑا ہوں

سینہ فگار، بے حرف و صوت، بے نور حالتوں کے حصار میں ہوں، مرے لیے میری راہ آسان کرکہ پھر سے، کہ پھر سے میں تیری رحمتوں کے شفیق سائے میں لوٹ آؤں

طلب کا موسم خزاں رسیدہ ہے

اس کو رنگِ بہار دے اور مجھے میری روشنی عطا کر

گزر گہہِ وقت کے کنارے جو کھو چکا ہوںمجھے وہی آگہی عطا کر

پیش کش

حرف ساز لمحوں میں

اے متاعِ جاں، جاناں

میرے ذرّے ذرّے میں

اپنی روشنی بھر دے

مجھ میں ڈوب کر مجھ کو

مار دے امر کر دے

دوشعر

بارش کے بعد کی شادابی اور رنگ یہ بیر بہوٹی کا

یہ موسم گل کا سحر سہی، چھلکا تو اسی کے بام سے ہے

میری ایک ہی خواہش بس اتنی کہ وہ پلکیں دل میں اُتر جائیں

اور ایسی خواہش والے کو کیا واسطہ دانہ و دام سے ہے

دوشعر

اک رات تیری یاد کی خوشبو بنی ہوئی

اک چاند میرے ہجر کا بے خوابیوں میں ہے

بارش میں بھیگتی ہوئی لڑکی کو دیکھ کر

منظر فریبِ کشف کی حیرانیوں میں ہے
 

شعر

دستکیں تو ہَوا بھی دیتی ہے

کوئی آواز دے تو بولیں بھی

شعر

ہماری آنکھیں سلامت رہیں تو آخر کار

لہو رلائے گی اک دن تمھاری خاموشی

شعر

صاف رکھو گھروں کی دیواریں

مکڑیاں جال بننے والی ہیں

شعر 

جن کو حضور شاہ سے اذن سخن نہ مل سکا

ایسے بھی کچھ گواہ تھے جرم و سزا کے درمیاں

شعر

سانسیں رکی ہوئی ہیں پرندوں کی خوف سے

لمحہ کوئی عذاب کا پرَ کھولنے کو ہے

شعر

اس کی آنکھوں میں جھانک کر خاور

میر جی کی غزل سنالو گے!

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE