Urdu Manzil


Forum
Directory
Overseas Pakistani
 

نذر فیض۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاطر عثمانی

توُفیض چمکا جو بن کے جھومر

تو شاعری کی جبیں سجی ہے

تو فیض لہہجہ ہے رم جھمی سا

وہ جس کی بوندوں میں نغمگی ہے

تو فیض جھرنا ہےجس کی اب تک

دلوں پہ آواز گر رہی ہے

تو فیض مثل کلامی ِگل

وہ جس کی ہر بات پھلجھٹری ہے

تو فیض دریا ہے وہ خرد کا

کہ جس میں بینائی بہہ رہی ہے

تو فیض دنیا کے سارے ریشم

تمام صندل کا آدمی ہے

تو فیض وہ بادشاہِ خوشبو

ہوا بھی رتھ پر اڑا رہی ہے

تو فیض تعویذ ہے وہ جس میں

محبتوں کی زباں لکھی ہے

تو فیض ایسی ندی ہے سب کو

جو فیض ہی فیض دے رہی ہے

 توفیض ہے وہ کتاب جس میں

بشر کی ساری کتھا چھپی ہے

تو فیض ہے سچ کی وہ گواہی

جو مقتلوں پہ بھی بولتی ہے

تو فیض ہے وہ اجالاجس سے

شبوں کی تاریکی بھاگتی ہے

تو فیض ہے وہ لکیر جو سب

حدوں سے آگے نکل گئی ہے

تو فیض منبع ہے روشنی کا

وہ جس کی کرنوں میں زندگی ہے

 

Blue bar

CLICK HERE TO GO BACK TO HOME PAGE